وحشتوں کے جاتے ہی دہشتوں نے آ گھیرا| ظہور نظر |

وحشتوں کے جاتے ہی دہشتوں نے آ گھیرا| ظہور نظر |
وحشتوں کے جاتے ہی دہشتوں نے آ گھیرا| ظہور نظر |

  

وحشتوں کے جاتے ہی دہشتوں نے آ گھیرا

وسوسوں نے آ پکڑا ، واہموں نے آ گھیرا

روند کر ہرا جنگل ایک پل نہ سوئے تھے

ہاتھیوں کے گلے کو چیونٹیوں نے آ گھیرا

شہرِ یارِ خود سر سے یہ سوال تو پوچھو

ایک دن اگر اُس کو سر پھروں نے آ گھیرا 

درد ناک کچھ باتیں میرے دل میں بھی آئیں

شامِ وصل اس کو بھی رنجشوں نے آ گھیرا

سوچ نے قدم رکھا تیرے شہر میں جب بھی

دل کو تیری قربت کے فاصلوں نے آ گھیرا

پھر نظر میں لہرائے شامِ ہجر کے سائے

چشمِ منتظر کو پھر آ  نسوؤں نے آ گھیرا

شاعر: ظہور نظر

(مجموعۂ کلام: کلیاتِ ظہور ںظر؛سالِ اشاعت،1987)

Wehshaton   K    Jaatay   Hi   Dehshaton    Nay   Aa   Ghaira

Waswason    Nay   Pakrra   Waahmon    Nay   Aa   Ghaira

Raond   Kar   Hara   Jangal   Aik   Pall   Na   Soay   Thay

Haathiun   K   Gallay   Ko    Chiuntion    Nay   Aa   Ghaira

Shehr-e-Yaar -e-Khud   Sar   Say   Yeh   Sawaal    To   Poochho

Aik   Din   Agar   Uss   Ko   Sar   Phiron    Nay   Aa   Ghaira

Dardnaak    Kuchh    Baaten    Meray    Dil   Men   Bhi   Aaen

Shaam-e-Wasl    Uss    Ko    Bhi   Ranjashon    Nay   Aa   Ghaira

Soch    Nay   Qadam    Rakha   Teray   Shehr   Men   Jab   Bhi

Dil   Ko   Teri    Qurbat   K   Faaslon    Nay   Aa   Ghaira

Phir   NAZAR   Men   Lehraaey    Shaam-e-Hijr   K   Saaey

Chashm-e-Muntazir   Ko   Phir   Aansuon    Nay   Aa   Ghaira

Poet: Zahoor    Nazar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -