جاگنا بس میں نہ رہ جائے تو کیوں سوئیں لوگ| ظہور نظر |

جاگنا بس میں نہ رہ جائے تو کیوں سوئیں لوگ| ظہور نظر |

  

جاگنا بس میں نہ رہ جائے تو کیوں سوئیں لوگ

جس کو پھر پانا نا ممکن ہو وہ کیوں کھوئیں لوگ

جس کو منزل پہ پہنچتے ہی بدل جانا ہو

بوجھ اس قافلہ سالار کا کیوں ڈھوئیں لوگ

دل لہو ہوتا ہے تب آنکھ میں اشک آتا ہے

وقت گر ہنس کے گزر جائے تو کیوں روئیں لوگ

جس کا نم ہم کی طرح موت ہو فصلوں کی نظر

پیار اس سیم زدہ کھیت میں کیو ں بوئیں لوگ

شاعر: ظہور نظر

(مجموعۂ کلام: کلیاتِ ظہور ںظر؛سالِ اشاعت،1987)

Jaagna    Bass    Men   Na   Reh   Jaaey   To    Kiun    Soen   Log

Jiss    Ko    Phir    Paana   Na    Mumkin   Ho    Wo    Kiun    Khoen   Log

Jiss   Ko     Manzil   Pe    Pahunchtay   Hi    Badall   Jaana   Ho

Bojh   Uss   Qaafla   Salaar    Ka   Kiun    Dhoen   Log

Dil   Lahu    Hota    Hay   Tab   Aankh   Men   Ashk    Aata   Hay

Waqt    Gar    Hans    K   Guzar    Jaaey   To    Kiun    Roen   Log

Jiss    Ka   Namm   Ham   Ki   Tarah   Maot   Ho   Faslon   Ki   Nazar

Payaar    Uss   Saim   Zadaa    Khait   Men   Kiun   Boen   Log

Poet: Zahoor   Nazar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -