جب اس کے در سے میں اٹھا ملال کوئی نہ تھا| ظہور نظر |

جب اس کے در سے میں اٹھا ملال کوئی نہ تھا| ظہور نظر |
جب اس کے در سے میں اٹھا ملال کوئی نہ تھا| ظہور نظر |

  

جب اس کے در سے میں اٹھا ملال کوئی نہ تھا

کہ میری جھولی میں باقی سوال کوئی نہ تھا

بہار آئی تو   اپنا سِوائے زِنداں کے

تمام شہر میں پُرسانِ حال کوئی نہ تھا

سفر سے لوٹا ہوں جس سال بھی مِرے گھر میں

سوائے غربتِ آئندہ سال  کوئی نہ تھا

یقین کر  کہ تِری آنکھ اٹھنے سے پہلے

مری نگاہ کے شیشے میں بال  کوئی نہ تھا

ہوا جو یوں تو یہ خوبی ترے ہنر کی تھی

مِری وفاؤں میں  میرا کمال کوئی نہ تھا

وہاں بھی ہم نے کمائی حلال کی روزی

جہاں پہ فرقِ حرام و حلال کوئی نہ تھا

ہمی سے ہاتھ نہ اٹھے کبھی دعا کے لئے

وگرنہ اس کی خدائی میں کال  کوئی نہ تھا

بھرے وہ زخم بھی سفاک وقت نے میرے

نظرؔ   میں جن کا مری، اندمال  کوئی نہ تھا

ظہور نظر

Jab    Uss   K    Dar   Say   Main   Utha   Malaal    Koi   Na   Tha

Keh   Meri    Jholi    Men   Baaqi   Sawaal    Koi   Na   Tha

Bahaar   Aai   To    Apan   Siwaa-e-Zindaan   K 

Tamaam   Shehr   Men   Pursaan-e-Haal    Koi   Na   Tha

Safar    Say   Laota    Hun   Jiss   Saal   Bhi , Miray   Ghar   Men

Siwaa-e-Ghurbat-e-Aainda   Saal    Koi   Na   Tha

Yaqeen    Kar   Keh   Tiri   Aankh   Uthany   Say   Pehlay

Miri    Nigaah   K   Sheeshay   Men   Baal    Koi   Na   Tha

Hua   Jo    Yun   To   Yeh    Khoobi   Tiray    Hunar    Ki   Thi'

Miri   Wafaaon   Men   Mira   Kamaal    Koi   Na   Tha

Wahaan    Bhi   Ham   Nay   Kamaai   Halaal    Ki   Rozi

Jahan    Farq-e-Haraam-e-Halaal    Koi   Na   Tha

Hami   Say   Haath   Na   Uthay     Kbhi   Dua   K   Liay

Wagarna    Uss   Ki    Khudaai    Men   Kaal    Koi   Na   Tha

Bharay   Wo   Zakhm   Bhi   Safaak   Waqt   Nay   Meray 

NAZAR    Men   Jin   Ka    Miri    Indamaal    Koi   Na   Tha

Poet: Zahoor    Nazar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -