آج وا ہو درِ زنداں تو مزا آ جائے| عابد علی عابد |

آج وا ہو درِ زنداں تو مزا آ جائے| عابد علی عابد |
آج وا ہو درِ زنداں تو مزا آ جائے| عابد علی عابد |

  

آج وا ہو درِ زنداں تو مزا آ جائے

پھر عنادل ہوں غزل خواں تو مزا آ جائے

بزم اُن ہو، شراب ان کی ہو، ساقی اُن کا

یہ جو ہو منصبِ رنداں تو مزا آ جائے

کیسی کیسی ہے شبِ تار یہاں جلوہ افروز

صبح اک روز ہو خنداں تو مزا آ جائے

تم نے کچھ شعلہ نواؤں کا تماشا دیکھا

داغ ہوں سب کے نمایاں تو مزا آ جائے

دولتِ درد ملی چند بلا کیشوں کو

اور یہ جنس ہو ارزاں تو مزا آ جائے

پھر سجاؤں غمِ جاناں سے غزل کے دو بام

بھول جاؤں غمِ دوراں تو مزا آ جائے

عاملِ شہر سمجھتا نہیں عابد کا کلام

وہ سخن داں ہو مری جاں تو مزا آ جائے

شاعر: عابد علی عابد

(مجموعۂ کلام:شبِ نگار بنداں؛سالِ اشاعت،1955)

Aaj   Waa    Ho   Dar-e-Zindaan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Phir    Anaadil   Hon    Ghazal   Khaan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Bazm   Un   Ki   Ho  ,  Sharaab   Un    Ki   Ho  ,   Saaqi   Un   Ka

Yeh    Jo   Ho   Mansab-e-Rindaan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Tum   Nay    Kuchh    Shola    Nawaaon    Ka    Tamaasha   Dekha

Daagh    Hon   Sab    K   Numayaan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Daolat -e-Dard    Mili    Chand    Balaa    Kaishon   Ko

Aor   Yeh    Jins   Ho    Arzaan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Phir    Sajaaun    Gham-e-Janaan    Say    Ghazal   K   Dar-o-Baam

Bhool    Jaaun    Gham-e-Daoraan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Aamil-e-Shehr    Samajhta    Nahen    ABID    Ka   Kalaam

Wo   Sukhan     Daan    Ho   Miri   Jaan   To   Mazaa   Aa   Jaaey

Poet: Abid   Ali   Abid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -