اپنی تجلیوں سےمعمور ہوگئے ہم| عابد علی عابد |

اپنی تجلیوں سےمعمور ہوگئے ہم| عابد علی عابد |
اپنی تجلیوں سےمعمور ہوگئے ہم| عابد علی عابد |

  

اپنی تجلیوں سےمعمور ہوگئے ہم

یا خاکِ رہ گزر یا طور ہوگئے ہم

یاروں کی تشنہ کامی زنداں میں یاد آئی

ساقی سے جام لے کر رنجور ہوگئے ہم

کیا واردات ہے یہ نازک سی بات ہے یہ

یاتھے ٘مثالِ خارا یا چور ہوگئے ہم

ہم اور جا کے زُلفِ ایام سے اُلجھتے 

اے کاکلِ پریشاں مجبور ہوگئے ہم

یاروں نے دشمنی کی ہم نے خلوص برتا

کچھ دور ہو گئے وہ کچھ دور ہوگئے ہم

محفل میں آخرِ شب اک بات کی کمی تھی

وہ بات ہم نے کہہ دی منصور ہوگئے ہم

شاعر: عابد علی عابد

(مجموعۂ کلام:شبِ نگار بنداں؛سالِ اشاعت،1955)

Apni    Tajallion   Say   Mamoor   Ho    Gaey   Ham

Ya    Khaak-e-Rehguzar   Thay   Ya   Toor   Ho    Gaey   Ham

Yaaron    Ki    Tashna    Kaami    Zindaan   Men   Yaad   Aai

Saaqi   Say   Jaam    Lay   Kar   Ranjoor   Ho    Gaey   Ham

Kaya   Waardaat   Hay    Yeh   Naazuk   Si    Baat    Hay   Yeh

Ya   Thay    Misaal-e-Khaara   Ya   Choor   Ho    Gaey   Ham

Ham    Aor    Ja    K   Zulf-e-Ayyaam    Say   Ulajhtay

Ay    Kaakul-e-Pareshaan    Majboor   Ho    Gaey   Ham

Yaaron    Nay    Dushmani    Ki    Ham    Nay    Khuloos   Barta

Kuchh    Door    Ho    Gaey    Wo    Kuchh   Door    Ho    Gaey   Ham

Mehfill   Men   Aakhir-e-Shab    Ik   Baat    Ki    Kami   Thi

Wo    Baat    Ham   Nay    Keh    Di   Mansoor   Ho    Gaey   Ham

Poet: Abid    Ali   Abid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -