کیا مقامِ بلند رکھتا ہوں| عابد علی عابد |

کیا مقامِ بلند رکھتا ہوں| عابد علی عابد |
کیا مقامِ بلند رکھتا ہوں| عابد علی عابد |

  

کیا مقامِ بلند رکھتا ہوں

میں دلِ درد مند رکھتا ہوں

چاندنی چاندنی ہے بزمِ خیال

مہوشوں کو پسند رکھتا ہوں

دل میں ایسا ہے اک مقام جہاں

سینت کر زہرِ خند رکھتا ہوں

نغمۂ رنگ، شعلہ آہنگ

شعبدے میں بھی چند رکھتا ہوں

حذر اے ساکنانِ بامِ بلند

آستیں میں کمند رکھتا ہوں

مجھ پہ آسان ہے زندگی عابد

طبع مشکل پسند رکھتا ہوں

شاعر: عابد علی عابد

(مجموعۂ کلام:شبِ نگار بنداں؛سالِ اشاعت،1955)

Kaya   Maqaam-e-Buland   Rakhta   Hun

Main   Dil-e-Dard    Mand   Rakhta   Hun

Chaandni    Chaandni   Hay   Bazm-e-Khayaal

Mehvashon   Ko    Pasand   Rakhta   Hun

Dil   Men   Aisa   Hay   Ik  Maqaam    Jahaan

Saint   Kar   Zehr-e-Khand   Rakhta   Hun

Nagham-e-Rang  ,   Shola   Aahang

Shobaday   Main    Bhi   Chand   Rakhta   Hun

Hazr   Ay   Sanknaan-e- Baam-e-Buland

Aasteen   Main   Kamand   Rakhta   Hun

Mujh    Pe    Aasaan    Hay    Zindagi   ABID

Tabaa    Mushkill    Pasaand   Rakhta   Hun

Poet:Abid   Ali   Abid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -