پھیلے ہوئے ہیں شہر میں سائے نڈھال سے | عادل منصوری |

پھیلے ہوئے ہیں شہر میں سائے نڈھال سے | عادل منصوری |
پھیلے ہوئے ہیں شہر میں سائے نڈھال سے | عادل منصوری |

  

پھیلے ہوئے ہیں شہر میں سائے نڈھال سے 

جائیں کہاں نکل کے خیالوں کے جال سے  

کیسا بھی تلخ ذکر ہو کیسی بھی ترش بات 

ان کی سمجھ میں آئے گی گل کی مثال سے 

رنگوں کو بہتے دیکھیے کمرے کے فرش پر 

کرنوں کے وار روکئے شیشے کی ڈھال سے 

آنکھوں میں آنسوؤں کا کہیں نام تک نہیں 

اب جوتے صاف کیجئے ان کے رومال سے 

چپ چاپ بیٹھے رہتے ہیں کچھ بولتے نہیں 

بچے بگڑ گئے ہیں بہت دیکھ بھال سے 

پھر پانیوں میں نقرئی سائے اتر گئے 

پھر رات جگمگا اٹھی چاندی کے تھال سے 

شاعر: عادل منصوری

Phailay    Huay    Hen    Shehr    Men    Saaey    Nidhaal   Say

Jaaen    Kahan   Nikal    K   Khayaalon    K   Jaal   Say

 

Kaisa    Bhi    Talkh    Zikr   Ho    Kaisi   Bhi   Tursh    Baat   Ho

Un   Ki   Smajh    Men    Aaey   Gi   Gull   Ki   Misaal   Say

 Rangon   Ko    Behtay   Dekhiay   Kamray    K   Farsh   Par

Kirnon    K   Waar    Rokiay    Sheeshay    Ki   Dhaal   Say

 Aankhon   Men    Aansuon   Ka   Kahen    Zikr   Tak   Nahen

Ab    Jootay    Saaf     Kijiay   Un    K    Romaal   Say

 Chup    Chaap    Baithay    Rehtay    Ho    Kuchh    Boltay   Nahen

Bachay    Bigarr    Gaey    Hen    Bahut   Dekh    Bhaal   Say

 Phir    Paanion    Men    Naqrai    Saaey   Utar    Gaey

Phir   Raat    Jagmagaa    Uthi    Chaandi    K    Thaal   Say

Poet: Adil   Mansoori 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -