ہاتھ میں آفتاب پگھلا کر | عادل منصوری |

ہاتھ میں آفتاب پگھلا کر | عادل منصوری |
ہاتھ میں آفتاب پگھلا کر | عادل منصوری |

  

ہاتھ میں آفتاب پگھلا کر 

رات بھر روشنی سے کھیلا کر 

یوں کھلے سر نہ گھر سے نکلا کر 

دیکھ بوڑھوں کی بات مانا کر 

آئنہ آئینے میں کیا دیکھے 

ٹوٹ جاتے ہیں خواب ٹکرا کر 

دیکھ ٹھوکر بنے نہ تاریکی 

کوئی سویا ہے پاؤں پھیلا کر 

اونٹ جانے کدھر نکل بھاگا 

جلتے صحرا میں ہم کو ٹھہرا کر 

ایک دم یوں اچھل نہیں پڑتے 

بات کے پینترے بھی سمجھا کر 

شاعر: عادل منصوری

Haath    Men    Aftaab    Pighlaa   Kar

Raat    Bhar    Raoshni    Say   Khaila   Kar

 

Yun    Khulay    Sar   Na    Ghar    Say   Nikla   Kar

Dekh   Borrhon    Ki    Baat    Maana   Kar

 Aaina   Aainay    Men    Kaya   Dekhay

Toot    Jaatay   Hen    Khaab   Takraa   Kar

 

Dekh    Thokar    Banay    Na   Tareeki

Koi    Soya    Hay    Paaon    Phaila   Kar

 Oont   Jaanay     Kidhar    Nikal    Bhaaga

Jaltay    Sehra    Men    Ham    Ko    Thehraa   Kar

 Aik    Dam    yun    Uchhal   Nahen    Parrtay

Baat    K    Paintaray    Bhi     Samjha   Kar

Poet: Adil   Mansuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -