یہ جو اُس سے مجھے محبت ہے| عباس تابش |

یہ جو اُس سے مجھے محبت ہے| عباس تابش |
یہ جو اُس سے مجھے محبت ہے| عباس تابش |

  

یہ جو اُس سے مجھے محبت ہے

اک ضرورت بلا ضرورت ہے

اپنی تعریف سن نہیں سکتا

خود سے مجھ کو بلا کی وحشت ہے

یہ مرا یوں ہی بولتے رہنا

ان کہی بات کی وضاحت ہے

میں بھی شاید اسے گزار سکوں

زندگی عرصۂ ندامت ہے

اپنی تلوار تیز رکھتا ہوں

جانے کس سے مجھے عداوت ہے

نیم خوابی کا کیا کروں تابش

نیند بھی رت جگے کی صورت ہے

شاعر: عباس تابش

(مجموعۂ کلام:آسمان )

Yeh    Jo   Uss   Say   Mujhay    Muhabbat    Hay

Ik    Zaroorat   Bila    Zaroorat   Hay

Apni    Tareef    Sun   Nahen   Sakta

Khud   Say    Mujh   Ko   Balaa    Ki   Wehshat   Hay

Yeh    Mira    Yunhi    Boltay   Rehna

An    Kahi    Baat    Ki    Wazaahat     Hay

Main   Bhi   Shaayad   Usay    Guzaar   Sakun'

Zindagi    Arsa-e-Nadaamat   Hay

Apni   Talawaar    Taiz    Rakhta   Hun

Jaanay    Kiss    Say    Mujhay    Adaawwat    Hay

Neem    Khaabi    Ka   Kaya    Krun   TABISH

Neend    Bhi    Rat Jagay    Ki    Soorat   Hay

Poet: Abbas   Tabish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -