تہمت اُتار پھینکی لبادہ بدل لیا| عباس تابش |

تہمت اُتار پھینکی لبادہ بدل لیا| عباس تابش |
تہمت اُتار پھینکی لبادہ بدل لیا| عباس تابش |

  

تہمت اُتار پھینکی لبادہ بدل لیا

خود کو ضرورتوں سے زیادہ بدل لیا

جی چاہتا تھا روؤں اُسے جاں سے مار کے

آنکھیں چھلک پڑیں تو ارادہ بدل لیا

جب دیکھا رہزنوں کی توجہ نہیں ادھر

شہزادگی سے خرقۂ سادہ بدل لیا

کیسے قبول کرتے مجسم غبار کو

منزل قریب آئی تو جادہ بدل لیا

شاعر: عباس تابش

(مجموعۂ کلام:آسمان )

Tohmat    Utaar    Phainki    Libaada    Badal    Liya

Khud    Ki    Zaroorton    Say    Ziyaada    Badal    Liya

Ji    Chaahta    Tha   Roun    Usay    Jaa'n    Say   Maar   K

Aankhen    Chhalak    Parren   To   Iraada    Badal    Liya

Jab    Dekha    Rehzanon    Ki    Tawajjo    Idhar   Nahen

Shehzaadgi    Say   Kharqa-e-Saada    Badal    Liya

Kaisay   Qubool     Kartay    Mujassam    Ghubaar   Ko

Manzill    Qareeb    Aai    To   Jaada    Badal    Liya

Poet:Abbas    Tabish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -