سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے| عباس تابش |

سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے| عباس تابش |
سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے| عباس تابش |

  

سانس کے شور کو جھنکار نہ سمجھا جائے

ہم کو اندر سے گرفتار نہ سمجھا جائے

اس کو رستے سے ہٹانے کا یہ مطلب تو نہیں

کسی دیوار کو دیوار نہ سمجھا جائے

میں کسی اور حوالے سے اسے دیکھتا ہوں

مجھ کو دنیا کا طرف دار نہ سمجھا جائے

یہ زمیں تو ہے کسی کاغذی کشتی جیسی

بیٹھ جاتا ہوں اگر بار نہ سمجھا جائے

اس کو عادت ہے گھنے پیڑ میں سو جانے کی

چاند کو دیدۂ بے دار نہ سمجھا جائے

اپنی باتوں پہ وہ قائم نہیں رہتا تابشؔ

اُس کے انکار کو انکار نہ سمجھا جائے 

شاعر: عباس تابش

(مجموعۂ کلام:آسمان )

Saans     K     Shor    Ko    Jhankaar   Na   Samjha   Jaaey

Ham    Ko    Andar    Say   Gariftaar   Na   Samjha   Jaaey

Uss    Ko    Rastay    Say    Hataanay    Ka    Yeh    Matlab    To   Nahen

Kisi    Dewaar    Ko   Dewaar   Na   Samjha   Jaaey

Main    Kisi    Aor    Hawaalay    Say   Usay    Dekhta   Hun

Mujh    Ko    Dunya    Ka   Tarafdaar   Na   Samjha   Jaaey

Yeh    Zameen   To    Hay    Kisi    Kaaghzi    Kashti    Ki   Tarah

Baith    Jaata   Hun    Agar   Baar   Na   Samjha   Jaaey

Uss   Ko    Aadat    Hay    Ghanay    Pairr    Men    So    Jaanay    Ki

Chaand    Ko    Deeda-e-Baidaar   Na   Samjha   Jaaey

Apni    Baaton    Pe    Wo    Qaaim    Nahen    Rehta   TABISH

Uss     K    Inkaar    Ko    Inkaar   Na   Samjha   Jaaey

Poet: Abbas    Tabish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -