وہ جو اُس آنکھ کی کہانی ہے| عبدالحمید عدم |

وہ جو اُس آنکھ کی کہانی ہے| عبدالحمید عدم |
وہ جو اُس آنکھ کی کہانی ہے| عبدالحمید عدم |

  

وہ جو اُس آنکھ کی کہانی ہے

لہر ہے ، گِیت ہے ، جوانی ہے

غم اگر دِل کو راس آ جائے

شادمانی ہی شادمانی ہے

ہائے تقریر اُن نِگاہوں کی

جِن کا ٹھہراؤ بھی روانی ہے

کیسا پُرلطف ہے یہ ہنگامہ

کیسی دِلچسپ زِندگانی ہے

آؤ ، پُھولوں کی آگ پی جاؤ

دَورِ صہباۓ ارغوانی ہے

دیکھنا زرد بیل کی جانب

جیسے کوئی اُداس رانی ہے

رَنج سے عِشق شعلہ شعلہ ہے

شرم سے عقل پانی پانی ہے 

شاعر: عبدالحمید عدم

(مجموعۂ کلام:بطِ مے؛سالِ اشاعت،1957 )

Wo   Jo    Uss    Aankh    Ki    Kahaani   Hay

Lehr   Hay  ,   Geet   Hay  ,  Shaadmaani   Hay

 Gham   Agar    Dil   Ko   Raas   Aa   Jaaey

Shaadmaani    Hi    Shaadmaani   Hay

 Haaey    Taqreer    Un    Nigaahon   Ki

Jin    Ka    Thehraao    Bhi     Rawaani   Hay

 Kaisa    Pur    Lutf    Hay    Yeh   Hangaama

Kasi   Dilchasp    Yeh    Kahaani    Hay

 Aao    Phoolon    Ki     Aag    Pi    Jaao

Daor-e-Sehbaa-e-Arghawaani    Hay

Dekhan    Zard    Beil    Ki    Jaanib

Jaisay    Koi    Udaas    Raani   Hay

 

Ranj    Say    Eshq    Shola    Shola   Hay

Sharm    Say    Aql    Paani    Paani   Hay

 Poet: Abdul   Hamid   Adam

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -