ہائے کس ڈھب کی بات ہوتی ہے| عبدالحمید عدم |

ہائے کس ڈھب کی بات ہوتی ہے| عبدالحمید عدم |
ہائے کس ڈھب کی بات ہوتی ہے| عبدالحمید عدم |

  

ہائے کس  ڈھب کی بات ہوتی ہے

گیسو و لب کی بات ہوتی ہے

جانِ من کب کا ذکر کرتے ہو

جانِ من کب کی بات ہوتی ہے

آپ اکثر جو ہم سے کرتے ہیں

وہ تو مطلب کی بات ہوتی ہے

آؤ تھوڑا سا نور لے جاؤ

ماہ و کو کب کی بات ہوتی ہے

جب بھی ہوتا ہے دن کا ذکر عدمؔ

ساتھ ہی شب کی بات ہوتی ہے​

شاعر: عبد الحمید عدم ​

(مجموعۂ کلام:بطِ مے؛سالِ اشاعت،1957 )

Haaey    Kiss    Dhab    Ki   Baat    Hoti   Hay

Gaisu-o-Lab    Ki   Baat    Hoti   Hay

Jaan-e-Man    Kab    Ka    Zikr    Kartay    Ho

Jaan-e-Man    Kab    Ki   Baat    Hoti   Hay

Aap    Aksar     Jo    Ham    Say    Kartay   Hen

Wo    To   Matlab    Ki   Baat    Hoti   Hay

Aao    Thorra     Sa    Noor    Lay    Jaao

Maah-o-Kokab    Ki   Baat    Hoti   Hay

Jab    Bhi    Hota    Hay    Din    Ka    Zikr    ADAM

Saath    Hi    Shab    Ki   Baat    Hoti   Hay

Poet: Abdul    Hamid   Adam

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -