ذہن گلزار ہو گیا ہوگا| عبدالحمید عدم |

ذہن گلزار ہو گیا ہوگا| عبدالحمید عدم |
ذہن گلزار ہو گیا ہوگا| عبدالحمید عدم |

  

ذہن گلزار ہو گیا ہوگا

باغباں یار ہو گیا ہوگا

بات، سرکار! بن گئی ہوگی

کام، سرکار! ہو گیا ہوگا

پھول اُس زلف سے جدا ہو کر

سخت بیمار ہو گیا ہوگا

قافلہ اب نظر نہیں آتا

تیز رفتار ہو گیا ہوگا

ایک ارماں تو تھا عدم دل میں

سوکھ کر خار ہو گیا ہوگا

شاعر:  عبدالحمید عدم

(مجموعۂ کلام:بطِ مے؛سالِ اشاعت،1957 )

Zehn    Gulzaar    Ho    Gaya   Ho   Ga

Baaghbaan   Yaar    Ho    Gaya   Ho   Ga

Baat    Sarkaar   Ban   Gai   Ho   Gi

Kaam   Sarkaar    Ho    Gaya   Ho   Ga

Phool    Uss    Zulf    Say   Judaa   Ho   Kar

Sakht   Bemaar    Ho    Gaya   Ho   Ga

Qaafla   Ab    Nazar   Nahen   Aata

Taiz   Raftaar    Ho    Gaya   Ho   Ga

Aik    Armaan   To    Tha    ADAM   Dil    Men

Sookh    Kar    Khaar    Ho    Gaya   Ho   Ga

Poet: Abdul   Hamid   Adam

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -