کوئی پتھر کوئی گہر کیوں ہے | عدیم ہاشمی |

کوئی پتھر کوئی گہر کیوں ہے | عدیم ہاشمی |
کوئی پتھر کوئی گہر کیوں ہے | عدیم ہاشمی |

  

کوئی پتھر کوئی گہر کیوں ہے 

فرق لوگوں میں اس قدر کیوں ہے 

تو ملا ہے تو یہ خیال آیا 

زندگی اتنی مختصر کیوں ہے 

جب تجھے لوٹ کر نہیں آنا 

منتظر میری چشم تر کیوں ہے 

اس کی آنکھیں کہیں صدف تو نہیں 

اس کا ہر اشک ہی گہر کیوں ہے 

تو نہیں ہے تو روز و شب کیسے 

شام کیوں آ گئی سحر کیوں ہے 

کیوں روانہ ہے ہر گھڑی دنیا 

زندگی مستقل سفر کیوں ہے 

تجھے ملنا نہیں کسی سے عدیمؔ 

پھر بچھڑنے کا تجھ کو ڈر کیوں ہے 

شاعر: عدیم ہاشمی

Koi    Pathar    Koi   Gohar    Kiun    Hay

Farq    Logon    Men   Iss   Qadar  Kiun    Hay

 Tu    Mila   Hay   To   Yeh    Khayaal   Aaya

Zindagi    Itni   Mukhtasar  Kiun    Hay

 Jab   Tujhay   Laot   Kar   Nahen   Aana

Muntazir    Meri   Chashm Tar  Kiun    Hay

 Uss   Ki    Aankhen    Kahen    Sadaf    To   Nahen

Uss   Ka   Har   Ashk   Hi   Gohar  Kiun    Hay

 Tu   Nahen   Hay   To    Roz-o-Shab   Kaisay

Shaam    Kiun    Aa    Gai   Sahar  Kiun    Hay

 Kiun    Rawaana    Hay    Har    Gharri   Dunya

Zindagi    Mustaqill   Safar  Kiun    Hay

 Tujhay    Milna    Nahen    Kisi    Say   ADEEM

Phir    Bichharrnay   Ka    Tujh    Ko   Dar  Kiun    Hay

 Poet: Adeem   Hashmi 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -