ایسا بھی نہیں اُس سے ملا دے کوئی آ   کر | عدیم ہاشمی |

ایسا بھی نہیں اُس سے ملا دے کوئی آ   کر | عدیم ہاشمی |
ایسا بھی نہیں اُس سے ملا دے کوئی آ   کر | عدیم ہاشمی |

  

ایسا بھی نہیں اُس سے ملا دے کوئی آ   کر 

کیسا ہے وہ اتنا تو بتا دے کوئی آ   کر 

یہ بھی تو کسی ماں کا دلارا کوئی ہوگا 

اس قبر پہ بھی پھول چڑھا دے کوئی آ   کر 

سوکھی ہیں بڑی دیر سے پلکوں کی زبانیں 

بس آج تو جی بھر کے رلا دے کوئی آ   کر 

ہر گھر پہ ہے آواز ہر اک در پہ ہے دستک 

بیٹھا ہوں کہ مجھ کو بھی صدا دے کوئی آ   کر 

اس خواہشِ ناکام کا خوں بھی مرے سر ہے 

زندہ ہوں کہ اس کی بھی سزا دے کوئی آ   کر 

شاعر: عدیم ہاشمی

Aisa    Bhi   Nahen   Uss   Say   Mila   Day   Koi   Aa   Kar

Kaisa    Hay    Wo   Itna   To    Bataa   Day   Koi   Aa   Kar

 Yeh   Bhi   To   Kisi    Maan     Ka    Dulaara    Koi    Ho    Ga

Iss    Qabar    Pe   Bhi    Phool    Charrha   Day   Koi   Aa   Kar

 Sookhi    Hen    Barri    Dair   Say    Palkon   Ki   Zubaanen

Bass    Aaj   To    Ji    Bhar    K   Rulaa   Day   Koi   Aa   Kar

 Har    Ghar   Pe    Hay    Aawaaz    Har   Ik    Dar   Pe     Hay   Dastak

Baitha   Hun     Keh    Mujh     Ko    Bhi   Sadaa   Day   Koi   Aa   Kar

 Iss    Khaahish -e-Nakaam    Ka    Khoon    Bhi    Miray    Sar   Hay

Zinda    Hun    Keh    Iss    Ki    Bhi    Sazaa   Day   Koi   Aa   Kar

 Poet: Adeem   Hashmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -