فاصلے ایسے بھی ہوں گے یہ کبھی سوچا نہ تھا| عدیم ہاشمی |

فاصلے ایسے بھی ہوں گے یہ کبھی سوچا نہ تھا| عدیم ہاشمی |
فاصلے ایسے بھی ہوں گے یہ کبھی سوچا نہ تھا| عدیم ہاشمی |

  

فاصلے ایسے بھی ہوں گے یہ کبھی سوچا نہ تھا

سامنے بیٹھا تھا میرے اور وہ میرا نہ تھا

وہ کہ خوشبو کی طرح پھیلا تھا میرے چار سو

میں اسے محسوس کر سکتا تھا چھو سکتا نہ تھا

رات بھر پچھلی ہی آہٹ کان میں آتی رہی

جھانک کر دیکھا گلی میں کوئی بھی آیا نہ تھا

آج اس نے درد بھی اپنے علیحدہ کر لیے

آج میں رویا تو میرے ساتھ وہ رویا نہ تھا

یاد کر کے اور بھی تکلیف ہوتی تھی عدیم

بھول جانے کے سوا اب کوئی بھی چارہ نہ تھا 

شاعر: عدیم ہاشمی

ٖFaaslay    Aisay   Bhi    Hon   Gay   Yeh    Kabhi   Socha    Na   Tha

Saamnay    Baitaha   Tha    Meray   Aor  Wo   Mera    Na   Tha

 Wo   Keh    Khushbu  Ki   Tarah    Phaila    Tha    Meray    Chaar   Su

Main    Usay    Mehsoos    Kar   Sakta   Tah    Chhoo   Saktaa    Na   Tha

 Raat    Bhar    Pichli    Hi    Aahat    Kaan    Men    Aati   Hay

Jhaank   Kar    Dekha   Gali    Men    Koi    Bhi    Aaya    Na   Tha

 Aaj    Uss   Nay    Apnay    Dard   Bhi    Elehda    Kar   Liay

Aaj   Main    Roya     To    Meray    Saath    Wo   Roya    Na   Tha

 Yaad    Kar    K    Aor    Bhi   Takleef    Hoti    Thi   ADEEM

Bhool    Jaanay    K    Siwa    Ab    Koi    Bhi   Chaara    Na   Tha

Poet: Adeem   Hashmi 

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -