وفاقی حکومت کار خانے داروں کو سہالیات دینے کیلئے پرعزم ہے: مشتاق احمد غنی

وفاقی حکومت کار خانے داروں کو سہالیات دینے کیلئے پرعزم ہے: مشتاق احمد غنی

  

        بنوں (نمائندہ خصوصی)خیبر پختونخوا فارما سوئیٹیکل مینوفیکچرنگ ایسوسی ایشن کی نو منتخب کابینہ نے حلف اٹھالیاتقریب کے مہمان خصوصی سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی کا تقریب میں پہنچنے پر پی ٹی آئی تحصیل بنوں کے صدر سکندر حیات خان، ڈاکٹر مقبول خان،فرجاد خان،تاجر رہنماؤں اور صحافیوں سمیت کارخانے داروں نے استقبال کیا اور انہیں پھولوں کے ہار پہنائے۔سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی نے نو منتخب صدر ڈاکٹر مقبول خان اور انکی کابینہ سے حلف لیا اور کابینہ کے عہدیداروں کو مبارکباد دی حلف برداری کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کارخانے داروں اور تاجروں کو سہولیات دینے کیلئے پرعزم ہے کیونکہ ملک کا نظام ٹیکسوں سے چلتا ہے اور ٹیکس تب ہی تاجر اور کارخانے دار دیں گے جب ان کا کاروبار چلے گا اور وہ مطمئن ہوں گے خیبر پختونخوا فارماسوئیٹیکل مینوفیکچرنگ ایسوسی ایشن کو تنگ کرنے والے18محکموں کی نشاندہی کی جائے انہیں نشان عبرت بنائیں گے۔انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف حکومت کرپشن کے خاتمے کیلئے سابقہ صوبائی حکومت میں بھی وسل بلو کا قانون رائج کرچکی ہے جسکے کے ذریعے کرپشن کی نشاندہی کرنے پر متعلقہ شخص سے کرپشن کی رقم بھی واپس قومی خزانے مین جمع کرائی جائیگی سزا بھی دی جائیگی،اطلاع دینے والے کو کل رقم کا30فیصد حصہ بھی دیا جائیگا اور اطلاع دہندہ کا نام بھی صیغہ راز میں رکھا جائیگا لیکن افسوس کہ آج تک کسی نے بھی اس حوالے سے حکومت کے ساتھ تعاون نہیں کیا۔کارخانوں کے ذریعے کروڑوں لوگوں کا روزگار ملا ہے کارخانے داروں کی تمام مشکلات دور کرنے کیلئے تمام سٹک ہولڈرز کے ساتھ مل کر میٹنگ کریں گے اور کارخانے داروں اور تاجروں کی تجاویز وفاق تک پہنائیں گے اور اسمبلی فلور پر بھی قوانین میں ترامیم لائیں گے اور انکی تجاویز کی روشنی میں قانون سازی کریں گے انہوں نے کہا کہ ماضی میں ایزی لوڈ کلچر،لندن میں جائیدادیں،سرے محل،مے فیئر پلاٹس بنانے والوں اور سرے محل والوں نے اپنی حکومتوں میں کرپشن کرکے ملک کو قرضوں کے دلدل میں ڈبویا۔نواز شریف نے اپنی حکومت میں کوئی معیاری ہسپتال نہیں بنایا اسلئے وہ علاج کیلئے لندن بھاگ جاتے ہیں لیکن تحریک انصاف کی حکومت نے صحت اور تعلیم پر خصوصی توجہ دی ہے اور ہر شہری کی جیب میں صحت کارڈ کی صورت میں مفت علاج کیلئے دس لاکھ روپے نقد پڑے ہیں جس پر وہ کسی بھی ہسپتال سے علاج کرسکتے ہیں اور یہ ایسا نظام ہے جسکی پاکستان ہی نہیں پوری دنیا میں مثال نہیں ملتی۔اگر عمران خان یا انکی ٹیم کا کوئی سپاہی بیمار ہوگا تو وہ پاکستان کے ہسپتالوں میں ہی علاج کریگا کیونکہ ہسپتالوں کی بہتری کیلئے کچھ کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے کرپشن پر سابقہ صوبائی حکومت میں پارٹی کے20ایم پی ایز کو پارٹی سے نکالا اور جس وزیر پر بھی کرپشن کا الزام لگتا ہے انہیں کہتے ہیں کہ چھٹی پر جاؤ اور الزامات سے پاک ہونے کے بعد واپس آؤ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان ہی پاکستان کے بہتر مستقبل کیلئے امید کی آخری کرن ہے لیکن انکے پاس الہ دین کا چراغ نہیں کہ 70سالوں کا گند تین سالوں میں صاف کریں تاہم اب تک جو بھی کیا بہترین کیا۔تقریب سے اسلم پرویز،پی بی سی کے شرافت علی مبارک،خیبر پختونخوا فارماسوئیٹیکل مینوفیکچرنگ ایسوسی ایشن کے صدر ڈاکٹر مقبول ودیگر رہنماؤں نے بھی خطاب کیا اور کارخانے داروں،تاجروں اور میڈسن سے وابستہ طبقوں کو درپیش مسائل سے تفصیلی طور پر آگاہ کیا۔اور لائنسن کی خصوصل میں آسانی پیدا کرنے،مختلف محکموں کی جانب سے لفافے دینے کیلئے تنگ کرنے اور لفافے نہ دینے پر جھوٹے مقدمات درج کرانے سمیت دیگر مسائل سے آگاہ کیا۔

مزید :

صفحہ اول -