آزاد کشمیر اور خیبر پختونخوا میں ہولناک زلزلے کو 16 برس گزر جانے کے باوجود تعمیراتی کام مکمل نہ ہوسکے

 آزاد کشمیر اور خیبر پختونخوا میں ہولناک زلزلے کو 16 برس گزر جانے کے باوجود ...
 آزاد کشمیر اور خیبر پختونخوا میں ہولناک زلزلے کو 16 برس گزر جانے کے باوجود تعمیراتی کام مکمل نہ ہوسکے

  

باغ(سعدیہ مغل) آزاد کشمیر اور خیبر پختونخوا میں 8اکتوبر 2005 کے ہولناک زلزلے کو 16 برس گزر گئے تاہم زلزلے سے تباہ شدہ علاقوں میں تعمیراتی کام اب بھی مکمل نہ ہوسکے ۔

آزاد کشمیر و خیبر پختونخوا کے زلزلے سے تباہ شدہ علاقوں میں بحالی اور تعمیر نو کے لئے ایرا کو مجموعی طور پر 14 ہزار 704 تعمیراتی منصوبے مکمل کرنے کا ہدف دیا گیا تھا جس میں سے اب تک 10 ہزار 978 منصوبے مکمل ہوچکے ہیں، 2099منصوبوں پر تعمیراتی کام جاری ہے تاہم اب بھی تعمیر نو کے 1628 منصوبوں پر کام شروع نہیں کیا جاسکا ہے۔ایرا کے ریکارڈ کے مطابق ایرا نے زلزلہ سے متاثرہ علاقوں میں تعلیم کے شعبہ کے 5 ہزار 722 منصوبوں میں سے3 ہزار 530 منصوبے مکمل کرلئے ہیں، 944 منصوبے زیر تکمیل ہیں جب کہ1248 منصوبوں پر تاحال کام شروع نہ ہوسکا ہے۔ صحت کے 320 منصوبوں میں سے 241 مکمل، 36 زیر تکمیل جبکہ 43 پر کام شروع نہ ہوسکا ہے۔ ماحولیات کے 466 منصوبوں میں سے 291 مکمل، 161زیر تکمیل جبکہ 14 پرکام شروع نہ ہوسکا ہے۔ گورننس کے 726 منصوبوں میں سے 583 مکمل، 98 زیر تکمیل جب کہ 45 پر کام شروع نہ ہوسکا ہے۔

ریکارڈ کے مطابق زلزلہ زدہ علاقوں میں ذریعہ معاش سے متعلقہ 2 ہزار 352 منصوبوں میں سے ایک ہزار 423 مکمل ، 695 زیر تکمیل جب کہ 234 پر تاحال کام شروع نہ ہوسکا ہے۔ ٹاون پلاننگ کے 33 منصوبوں میں سے31 منصوبے مکمل جبکہ 2 زیر تکمیل ہے۔ سماجی تحفظ کے15 میں سے7 منصوبے مکمل،2 زیر تکمیل جبکہ 6منصوبوں پر تاحال کام شروع نہ ہوسکا ہے۔ٹرانسپورٹ کے301 منصوبوں میں سے262 مکمل، 33 زیر تکمیل جبکہ 6 پرکام شروع نہ ہوسکا ہے۔ توانائی کے18 منصوبوں میں سے 15 منصوبے مکمل جبکہ 3 پر تاحال کام شروع نہ ہوسکا ہے۔

مزید :

قومی -