سندھ میں اتحادی ناراض ،وزراءنے استعفے جمع کرادیے ،آرڈیننس سپریم کورٹ میں چیلنج

سندھ میں اتحادی ناراض ،وزراءنے استعفے جمع کرادیے ،آرڈیننس سپریم کورٹ میں ...
سندھ میں اتحادی ناراض ،وزراءنے استعفے جمع کرادیے ،آرڈیننس سپریم کورٹ میں چیلنج

  

کراچی (مانیٹر نگ ڈیسک) سندھ کا نیا اور متنازع بلدیاتی نظام سپریم کورٹ میں چیلنج ہونے کے بعد سندھ حکومت سے الگ ہو نےوالی اتحادی جماعتوں کے وزراءاور مشیروں نے اپنے استعفے بھی وزیراعلیٰ ہاﺅس سندھ میں جمع کر وا دئیے ہیں۔ سندھ میں پیپلز لوکل آرڈیننس جار ی ہونے کے بعد چار اتحادی جماعتیں روٹھ گئیں ۔وزیر اعلیٰ ہاﺅس سندھ میں استعفے جمعع کر وانے والوںمیں مسلم لیگ فنکشنل کے دو وزراءجام مددعلی ،رفیق بھانن،دومشیروںامتیاز شیخ ،ناصر نظمانی اور معاونین خصوصی خادم حسین اور نور حسین خاص خیلی شامل ہیں۔مسلم لیگ کے صوبائی وزیر شہریار مہر ،نیشنل پیپلز پارٹی کے عابد جتوئی نے بھی استعفیٰ وزیر اعلیٰ ہاﺅس میں جمع کر وا دیا۔اے این پی کے امیر نواب پہلے سے وزیر اعلیٰ سندھ قائم علی شا ہ کو استعفیٰ دے چکے ہیں ۔اس سے پہلے سندھ کا نیا بلدیاتی آرڈیننس سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں چیلنج کردیا گیا۔ جس میں درخواست غزار سٹی الائنس کی طرف سے قبال قاسمی کی نے موقف اختیار کیا ہے کہ سندھ میں بلدیاتی نظام کا آرڈیننس غیر آئینی ہے۔ آرڈیننس آئین کی دفعہ چار، پانچ، آٹھ، پچیس، بتیس اور ایک سو چالیس کے متصادم ہے۔ نئے بلدیاتی نظام سے سندھ میں دہرا نظام رائج ہوجائے گا۔

مزید : کراچی /اہم خبریں