پاکستان کے 54 ویں یوم دفاع منانے کے لئے سفارتخانہ ابوظہبی میں تقریب کا انعقاد

پاکستان کے 54 ویں یوم دفاع منانے کے لئے سفارتخانہ ابوظہبی میں تقریب کا انعقاد
پاکستان کے 54 ویں یوم دفاع منانے کے لئے سفارتخانہ ابوظہبی میں تقریب کا انعقاد

  


دبئی (طاہر منیر طاہر) پاکستان کے 54 ویں یوم دفاع منانے کے لئے سفارتخانہ ، ابوظہبی میں ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا۔ حکومت پاکستان کے اس سال کے یوم دفاع کو "یکجہتی یوم یکجہتی کشمیر" کے طور پر منانے کے فیصلے کے عین مطابق ، جماعت نے کشمیری بھائیوں سے حق خودارادیت کی حقدار جدوجہد میں بھی اظہار یکجہتی کیا۔اس تقریب میں متحدہ عرب امارات میں مقیم پاکستان مسلح افواج کے نمائندوں کے علاوہ سفارتخانے کے عہدیداروں سمیت پاکستانی کمیونٹی کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔ تقریب کے دوران یوم دفاع سے متعلق دستاویزی فلمیں اور بھارتی مقبوضہ کشمیر میں تازہ ترین پیشرفت کی گئی۔ صدر ، وزیر اعظم اور آرمی چیف کے خصوصی پیغامات پڑھ کر سنائے گئے۔

متحدہ عرب امارات میں پاکستان کے سفیر جناب غلام دستگیر نے اپنے ریمارکس میں شہداء اور ان کے اہل خانہ کو خراج تحسین پیش کیا اور مسلح افواج پاکستان کی جرات اور پیشہ ورانہ خدمات کو سراہا۔ جموں و کشمیر کے عوام سے اظہار یکجہتی اور ہندوستانی مسلح افواج کے مظالم کی مذمت کرتے ہوئے سفیر نے کہا کہ کشمیریوں کی آواز کو جارحیت کے ذریعے خاموش نہیں کیا جاسکتا ہے ، نہ ہی وہ ان کے حق خودارادیت سے محروم ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ حکومت پاکستان غیر ملکی قبضے کے خلاف جائز جدوجہد میں کشمیری عوام کی سیاسی ، اخلاقی اور سفارتی حمایت جاری رکھے گی۔ انہوں نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کے پرامن حل اور خطے میں پائیدار امن و استحکام کے  کشمیریوں سے مشاورت کے لئے اپنا کردار ادا کرے۔ انہوں نے بین الاقوامی برادری سے بھی گذارش کی کہ وہ تیزی سے بگڑتی ہوئی صورتحال کا نوٹس لیں جس کے بعد جموں وکشمیر میں بھارتی فورسز کی جانب سے لگائے گئے کرفیو کے بعد اور عملی اقدامات اٹھائے جائیں تاکہ بھارت کو کی جانے والی غیر قانونی کارروائی کو پسپا کرنے اور کشمیری عوام کے انسانی حقوق کا احترام کرنے پر مجبور کیا جاسکے۔تقریب کے اختتام پر ، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق شہداء اور مسئلہ کشمیر کے جلد حل کے لئے خصوصی دعا کی گئی۔ 

مزید : عرب دنیا


loading...