دریاؤں اور نہروں کنارے تجاوزات کیخلاف کارروائی کی جائے، لیاقت خٹک 

دریاؤں اور نہروں کنارے تجاوزات کیخلاف کارروائی کی جائے، لیاقت خٹک 

  

پشاور (سٹاف رپورٹر)خیبر پختونخوا کے وزیر آبپاشی لیاقت خٹک نے ہدایت دی ہے کہ صوبے میں دریاؤں اور نہروں کے کنارے تجاوزات کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے انہوں نے کہا کہ اس بات کو بھی یقینی بنایا جائے کہ مستقبل میں دریاؤں اور نہروں کے کنارے تجاوزات نہ بنائی جا سکیں۔ ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر نے پیر کے روز رکن صوبائی اسمبلی و چیئرمین قائمہ کمیٹی برائے آبپاشی ملک شوکت علی کے ہمراہ مذکورہ محکمے کے اہم اجلاس کی مشترکہ صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں سیکرٹری آبپاشی طاہر اورکزئی، چیف انجینئر نارتھ، چیف انجینئر ساوتھ، چیف انجینئر ضم اضلاع، ڈائریکٹر جنرل سمال ڈیم اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔ صوبائی وزیر لیاقت خٹک نے کہا کہ نہروں اور دریاؤں کے کنارے تجاوزات کی وجہ سے نہ صرف پانی کے بہاؤ میں رکاوٹ پیدا ہوتی ہے بلکہ سیلاب اور طغیانی کے دوران لوگوں کی زندگیوں اور املاک کو بھی خطرہ لاحق ہوتا ہے۔ انہوں نے سیکرٹری آبپاشی کو ہدایت کی کہ ایسے تمام تجاوزات کے خاتمے کو یقینی بنانے کے لئے فوری اور موثر اقدامات اٹھائے جائیں۔ انہوں نے متعلقہ حکام کو مزید ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ نہروں کے کنارے سڑکوں کی مرمت کو یقینی بنایا جائے اور دیگر جاری منصوبوں کو بروقت مکمل کئے جائے۔ چیئرمین قائمہ کمیٹی ملک شوکت علی نے کہا کہ جہاں کہیں بھی کوئی پراجیکٹ ہو وہاں پر مقامی افراد کو تعینات کیا جائے تاکہ عملے کو فرائض کی انجام دہی میں مشکلات کم سے کم ہوں۔ سیکرٹری آبپاشی طاہر اورکزئی نے اجلاس کو سیلاب میں محکمہ آبپاشی کی ذمّہ داریاں کے بارے بتایا کہ سیلاب سے پہلے حفاظتی پشتوں کی تعمیر، دوران سیلاب مختلف مقامات پر پانی کے بہاؤ کے بارے میں معلومات کی فراہمی اور سیلاب کے بعد نقصانات کا جائزہ لینا ہے۔یہی وجہ ہے کہ حالیہ سیلابی ریلوں میں گزشتہ سیلابی صورتحال کی نسبت نقصانات کم ہوئے ہیں۔ صوبائی وزیر نے حالیہ سیلاب میں محکمے کی کاوشوں کو سراہا اور ہدایت کی کہ حالیہ بارشوں کے نتیجے میں سیلاب کی وجہ سے نقصانات کا تعین کیا جائے۔ جہاں آبپاشی کے نظام اور حفاظتی پشتوں کو نقصان پہنچا ہے اسکی جلد مرمت کو ہر صورت میں یقینی بنانے جائے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -