قادیانی غیر مسلم‘ اپنی حیثیت تسلیم کرلیں تو تنازعہ ختم‘ لیاقت بلوچ 

قادیانی غیر مسلم‘ اپنی حیثیت تسلیم کرلیں تو تنازعہ ختم‘ لیاقت بلوچ 

  

ملتان (پ ر) نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ اہل ایمان کا یہ فخر ہے کہ ہم خاتم الانبیا، رحمۃ اللعالمین ؐ کی امت میں سے ہیں۔ پاکستان کے آئین میں مسلم اور غیر مسلم کی تعریف اٹل ہے کوئی بھی اسے تبدیل نہیں کرسکتا۔ برطانوی ارکان پارلیمنٹ قادیانیوں کی حمایت کی آڑ میں پاکستان کی آزادی، پارلیمانی نظام اور جمہوریت میں مداخلت کرنا چاہتے ہیں۔ یورپی ممالک میں کھلم کھلا قرآن، پیغمبر اسلام ؐ اور شعائر اسلام کی توہین کر کے (بقیہ نمبر41صفحہ 7پر)

عالم اسلام کے جذبات کو مجروح کیا جارہاہے۔ قادیانی غیر مسلم ہیں اپنی اس حیثیت کو تسلیم کرلیں تو کوئی تنازعہ باقی نہ رہے گا۔ پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق محفوظ ہیں۔ دینی جماعتیں اقلیتوں کے حقوق کی حفاظت کو اپنا دینی شرعی فرض جانتی ہیں۔ مسئلہ قادیانیوں کے حقوق نہیں، یہ اقلیتی شر پسند گروہ عالمی سرپرستوں کی مدد سے مسلمانوں کے حق پر ڈاکہ مارنا چاہتے ہیں، ایسا ہونا ممکن نہیں۔ملتان میڈیا سنٹر سے جاری کردہ پریس ریلیز کے مطابق ان خیا لات کا اظہار انہوں نے تحفظ ختم نبوت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ لیاقت بلوچ نے پیر سید ہارون گیلانی کے ہمراہ عروۃ الوثقیٰ کے سربراہ علامہ سید جواد نقوی سے ملاقات کی۔ جامع اور لائبریری کا دورہ کیا اور عشائیہ پر تبادلہ خیال میں اتحاد امت کی عظیم الشان کانفرنس کے انعقاد پر مبارکباد دی۔ ملک میں سنی شیعہ اتحاد ملکی سلامتی اور بقا کے لیے ناگزیر ہے۔ شیعہ سنی اپنے دائروں میں ایسے بدبخت اور شر انگیزوں کی سرپرستی کی بجائے انہیں بے دخل اور ان سے برأت کا اعلان کردیں جو دل آزاری، مشترکہ مقدس متبرک ہستیوں کی توہین کر کے فساد پھیلانا چاہتے ہیں۔یہ نادان اسلام دشمن قوتوں کی شر انگیزی کی سہولت کاری کر رہے ہیں۔ لیاقت بلوچ نے وفاقی وزیر ہاؤسنگ اینڈ ورکس طارق بشیر چیمہ سے جاویدقصوری کے ساتھ ملاقات کی۔ گنڈا سنگھ والا سے دس کلو میٹر سڑک کی تباہ حالی پر آگاہی دی اور فوری تعمیر کے لیے مطالبہ کیا ہے۔ وفاقی وزیر نے یقین دہانی کرائی اور فوری طور پر ڈاٹریکٹر جنرل اور چیف انجینئر کو ہدایات جاری کیں کہ عوامی مفاد میں سڑک کی تعمیر کے لیے فوری اقدامات کیے جائیں، بارڈر ایریا کے عوام کے لیے ایسی سہولت وزارت کی ترجیح بنائی جائے۔

لیاقت بلوچ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -