فوڈ اتھارٹی ٹیمیں ان ایکشن‘  37یونٹس سیل‘ بھاری جرمانے 

فوڈ اتھارٹی ٹیمیں ان ایکشن‘  37یونٹس سیل‘ بھاری جرمانے 

  

ملتان (سٹاف رپورٹر)پنجاب فوڈ اتھارٹی کی کاروائیاں،مصالحہ جات یونٹ،پاپڑفیکٹریز، پولٹری شاپس،ڈرنک کارنرزکی چیکنگ، صفائی کے ناقص انتظامات پر37فوڈ یونٹس سربمہر، 720کلو ملاوٹی مصالحہ جات،900ساشے گٹکا، 500کلو چاول، 250کلو چینی برآمد(بقیہ نمبر29صفحہ 6پر)

،320لیٹر ملاوٹی دودھ تلف،حفظان صحت کے اصولوں کی خلاف ورزی پر75فوڈپوائنٹس کو440,000 روپے کے جرمانے عائد،469شاپس مالکان کوبہتری نوٹسز جاری کردئیے۔ تفصیلات کے مطابق فوڈ سیفٹی ٹیمز نے غلہ منڈی ملتان میں کارروائی کرتے ہوئے کاشف مصالحہ جات یونٹ کو مرچ پاؤڈر میں ملاوٹ کرنے، تیارشدہ مصنوعات کی مِس لیبلنگ کرنے، مصالحوں میں کھلے رنگ کی ملاوٹ پائے جانے اور گندے فرش پر سٹور کرنے پر مصالحہ جات یونٹ کو سیل کیاگیا۔مزید ملتان میں خضر حیات کریانہ کو ملاوٹی مصالحوں کی فروخت کرنے، ایم اے فوڈز پروڈکٹ،منہال فوڈز پروڈکٹ کو پاپڑ کی تیاری میں مضرآئل، ناقابل سراغ رنگ کے استعمال،فہیم سوڈا واٹر،کشمیرڈرنک کارنرمشروبات میں برِکس ویلیو کم ہونے، عمران پولٹری شاپ مضر گوشت کی فروخت کرنے، مہر عامر ڈرنک کارنرکو گٹکافروخت کرنے،اختر سری پائیکوباسی، مضر سری پائے سٹور کرنے، الشمس سوہن حلوہ کو پروڈکشن ایریامیں واشروم کی موجودگی،نور محمد سوہن حلوہ،لودھراں سے فریش ملکی چیز یونٹ کو مِس برانڈنگ کرنے پر سیل کیاگیا۔مظفر گڑھ میں ملک آئس فیکٹری کو برف کے بلاکس میں مردہ مکھیاں پائے جانے پرسربمہر کیاگیا۔اس کے علاوہ رحیم یارخان میں پاکیزہ ملک شاپ، شہباز ملک شاپ کو ملاوٹی دودھ فروخت کرنے پرسیل کیاگیا۔بہاولپور میں تنویر کریانہ،افضل کریانہ کو ملاوٹی مرچیں فروخت کرنے، بہاولنگر سے احمد سوئیٹس کو صفائی کے ناقص انتظامات ہونے، رحیم یار خان میں ماشاء اللہ کریانہ کو گٹکا فروخت کرنے پرسربمہر کردیاگیا۔مزیدلیہ میں رشیداینڈ سنزسپرسٹور،بلال کریانہ سٹور،ماشاء اللہ کریانہ سٹور، ڈی جی خان میں بلال فالودہ شاپ،راجن پورمیں المصطفی ڈیپارٹمنٹل سٹور، زبیر کریانہ سٹور، لیہ میں ماشاء اللہ سپرسٹور، عاشق ڈرنک کارنر، انوار کریانہ سٹور،راجن پور میں وسیم ڈرنک کارنر، مکہ نان شاپ، ڈی جی خان میں الیوسف کریانہ،اللہ بادشاہ ہوٹل، مظفرگڑھ میں کامران ملک شاپ کو گزشتہ دی گئی ہدایات پر عمل نہ کرنے اور لائسنس فیس کی عدم ادائیگی پر سیل کیاگیا۔ 

سیل

مزید :

ملتان صفحہ آخر -