ایک جا حرفِ وفا لکھا تھا، سو بھی مٹ گیا 

ایک جا حرفِ وفا لکھا تھا، سو بھی مٹ گیا 
ایک جا حرفِ وفا لکھا تھا، سو بھی مٹ گیا 

  

ایک جا حرفِ وفا لکھا تھا، سو بھی مٹ گیا 

ظاہراً  کاغذ ترے خط کا غلط بردار ہے 

جی جلے ذوقِ فنا کی نا تمامی پر نہ کیوں 

ہم نہیں جلتے نفس ہر چند آتش بار ہے 

آگ سے پانی میں بجھتے وقت اٹھتی ہے صدا 

ہر کوئی در ماندگی میں نالے سے ناچار ہے 

ہے وہی بد مستیِ ہر ذرّہ کا خود عذر خواہ 

جس کے جلوے سے زمیں تا آسماں سرشار ہے 

مجھ سے مت کہہ تو  ہمیں کہتا تھا اپنی زندگی

زندگی سے بھی مرا  جی اِن دنوں بیزار ہے 

آنکھ  کی تصویر سر نامے پہ کھینچی ہے کہ تا 

تجھ پہ کھل جاوے کہ اس کو حسرتِ دیدار ہے 

شاعر: مرزا غالب

Aik Jaa Harf e Tasalli Likha Tha So Wo Bhi Mitt Gaya

Zaahiran Kaagahz Tiray Khat Ka Ghalat Bardaar Hay

Ji Jalay Zoq e Fanaa Ki Naa Tamaami Par Na Kiun

Ham Nahen Jaltay Nafas  Har Chand Aatishbaar Hay

Aag Say Paani Men Bujhtay Waqt Uthti Hay Sadaa

Har Koi Darmaandgi Men Naalay Say Nachaar Hay

Hay Wahi Bad Masti Har Zarra Ka Khud Uzr Khaah

Jiss K Jalway Say Zameen Ta Aasmaan Sarshaar Hay

Mujh Say Mat Keh Tu Hamen Kehta Tha Apni Zindagi

Zindagi Say Bhi Mira Ji In Dinon Bezaar Hay

Aankh Ki Tasveer Sarnaamay Pe Khainchi Hay Keh Taa

Tujh Pe Khull Jaavey Keh Iss Ko hasrat e Dedaar Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -