مری ہستی فضائے حیرت آبادِ تمنا ہے

مری ہستی فضائے حیرت آبادِ تمنا ہے
مری ہستی فضائے حیرت آبادِ تمنا ہے

  

مری ہستی فضائے حیرت آبادِ تمنا ہے

جسے کہتے ہیں نالہ وہ اسی عالم کا عنقا ہے

خزاں کیا فصلِ گل کہتے ہیں کس کو؟ کوئی موسم ہو

وہی ہم ہیں، قفس ہے، اور ماتم بال و پر کا ہے

وفائے دلبراں ہے اتفاقی ورنہ اے ہمدم

اثر فریادِ دل ہاے حزیں کا کس نے دیکھا ہے

نہ لائی شوخیِ اندیشہ تابِ رنجِ نومیدی

کفِ افسوس ملنا عہدِ تجدیدِ تمنا ہے

شاعر: مرزا غالب

Miri Hasti Fazaa e Hairat Abaad e Tamanna Hay

Jissay Kehtay Hen Naala, Wo Isi Aalam Ka Anqa Hay

Khizaan Kaya, Fasl e Gull Kehtay Hen Kiss Ko , Koi Mos,am Ho

Wahi HAm Hen Qafass Hay, Aor Maatam  baal o Par Ka Hay

Wafaa e Dilbaraan Hay Itefaaqi Warna Ay Hamdam

Asar Faryaad e Dil Haa e  hazeen Ka Kiss Nay Dekha Hay

na laai Shokhi e Andesha Taab e ranj e Momeedi

Kaf e Afsos Milna  Ehd e Tajdeed e Tamanna Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -