عشق مجھ کو نہیں، وحشت ہی سہی

عشق مجھ کو نہیں، وحشت ہی سہی
عشق مجھ کو نہیں، وحشت ہی سہی

  

عشق مجھ کو نہیں، وحشت ہی سہی

میری وحشت تیری شہرت ہی سہی

قطع کیجئے نہ تعلق ہم سے

کچھ نہیں ہے تو عداوت ہی سہی

مرے ہونے میں کیا برائی ہے

اے ، وہ مجلس نہیں ، خلوت ہی سہی

ہم بھی دشمن تو نہیں  ہیں اپنے

غیر کو تجھ سے محبت ہی سہی

اپنی ہستی ہی سے ہو، جو کچھ ہو

آگہی گر نہیں ، غفلت ہی سہی

ہم کوئی ترکِ وفا کرتے ہیں 

نہ سہی عشق، مصیبت ہی سہی

کچھ تو دے اے فلکِ ناانصاف

آہ  و فریاد کی رخصت ہی سہی

ہم بھی تسلیم کی خو ڈالیں گے

بےنیازی تری عادت ہی سہی

یار سے چھیڑ چلی جائے اسد

گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی

شاعر: مرزا غالب

Eshq Mujh Ko Nahen Wehshat Hi Sahi

MiriWehshat Tiri Shohrat Hi Sahi

Qataa Kijiay Na Taalluq Ham Say

Kuch Nahen Hay To Adaawat Hi Sahi

Miray Honay Men Hay Kaya Rusewaai

Ay WoMajlis Nahen Khalwat Hi Sahi

Ham bhiDushman To Nahen Hen Apnay

Ghair Ko Tujh Say Muhabbat Hi Sahi

Apni Hasti Hi Say Ho m Jo Kuch Ho

Aagahi Gar Nahen, Ghaflat Hi Sahi

Umr Harchand Keh Hay Barq e Kharaam

Dil K Khoon Karnay Ki Fursat Hi Sahi

Ham Koi Tarq e Wafa Kartay Hen

Na Sahi Eshq Museebat Hi Sahi

Kuch To Day Ay Falak e Na Insaaf

Aah o Faryaad Ki Rukhsat Hi Sahi

Ham Bhi Tasleem Ki Khu Daalen Gay

Benayaazi Tiri Aadat Hi Sahi

Yaar Say Chairr Chali Jaaey ASAD

Gar Nahen Wasl To HAsrat Hi Sahi

Poet: Mirza Ghalib

شاعر: مرزا غالب

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -