شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے
شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

  

ہے آرمیدگی میں نکوہش بجا مجھے

صبحِ وطن ہے خندۂ دنداں نما مجھے

ڈھونڈے ہے اس مغنیِ آتش نفس کو جی

جس کی صدا ہو جلوۂ برقِ فنا مجھے

مستانہ طے کروں ہوں رہِ وادیِ خیال

تا باز گشت سے نہ رہے مدّعا مجھے

کرتا ہے بسکہ باغ میں تو بے حجابیاں

آنے لگی ہے نکہتِ گل سے حیا مجھے

کھلتا کسی پہ کیوں مرے دل کا معاملہ

شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

شاعر:مرزا غالب

Hay Aarmmdgi Men Nikohish Bajaa Mujhay

Subh e Watan Hay Uss Mughanni e Aatish Nafas Ko Ji

Jiss Ki Sadaa Ho Jalw e Barq e Fanaa Mujhay

Mastaana Tay karun Hun Rah e Waadi e Khayaal

Taa Baazgasht Say na Rahay Mudaa Mujhay

Karta Hay Bas Keh Baagh Men Tu Bay Hijaabiaan

Aanay Lagi Hay Nikhat e Gull Say Hayaa Mujhay

Khulta Kisi Pe Kiun Miray Dil Ka Muaamla

Sheron K Intekhaab Nay Ruswaa Kia Mujhay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -