گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے

گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے
گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے

  

گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے

تب اماں ہجر میں دی بردِ لیالی نے مجھے

نسیہ و نقدِ دو عالم کی حقیقت معلوم

لے لیا مجھ سے مری ہمّتِ عالی نے مجھے

کثرت آرائیِ وحدت ہے پرستاریِ  وہم

کر دیا کافر ان اصنامِ خیالی نے مجھے

ہوسِ گل کے تصوّر میں بھی کھٹکا نہ رہا

عجب آرام دیا بے پر و بالی نے مجھے

شاعر: مرزا غالب

Gharm e Faryaad Rakha Shakl e Nihaani Nay Mujhay

Tab Amaan Hijr Nay Di Bard e Layaali Nay Mujhay

Nasya o Naqd Do Aalam Ki Haqeeqat Maloom

Lay Lia Mujh Say Miri Himmat e Aali Nay Mujhay

Kasrat Aaraai e Wahdat Hay Parastaari e Wehm

Kar Dia Kaafir Un Asnaam e Khayaali Nay Mujhay

Hawas e Gull ka tasawwar Men Bhi Khatka Na Raha

Ajab Aaraam Dia Hay Par o Baali Nay Mujhay

Poet:Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -