سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے

سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے
سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے

  

سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے

بس نہیں چلتا کہ پھر خنجر کفِ قاتل میں ہے

دیکھنا تقریر کی لذّت کہ جو اس نے کہا

میں نے یہ جانا کہ گویا یہ بھی میرے دل میں ہے

گرچہ ہے کس کس برائی سے ولے با ایں ہمہ

ذکر میرا مجھ سے بہتر ہے کہ اس محفل میں ہے

بس ہجومِ نا امیدی خاک میں مل جائے گی

یہ جو اک لذّت ہماری سعیِ بے حاصل میں ہے

رنجِ رہ کیوں کھینچیے؟ واماندگی کو عشق ہے

اٹھ نہیں سکتا ہمارا جو قدم منزل میں ہے

جلوہ زارِ آتشِ دوزخ ہمارا دل سہی

فتنۂ شورِ قیامت کس کی آب و گِل میں ہے

ہے دلِ شوریدۂ غالب طلسمِ پیچ و تاب

رحم کر اپنی تمنّا پر کہ کس مشکل میں ہے

شاعر: مرزا غالب

Saadgi Pr Uss Ki Mar   Jany Ki Hasrayt Dil Men Hay

Bass Mahen Chalta Keh Phir Khanjar Kaf e Qaati Men Hay

Dekhna Taqreer Ki  Lazat Keh Jo Uss Nay Kaha

Main Nay Yeh Jaan Keh Goya Yeh Bhi Meray Dil Men Hay

Garcheh Hay Kiss Kiss Buraai Say Walay Baa Een Hamaa

Zikr Mera Mujh Say Behtar Keh Uss Mehfil Men Hay

Bass Hujoom e Na Umeedi Khaak Men Mill Jaaey Gi

Yeh Jo Ik Lazzat Hamaari Saee e  Be Haasil Men Hay

Ranj e Reh Kiun Khaichay Hay Wa maandgi Ko Eshq Hay

Uth Nahen Sakta , Hamaara Jo Qadam Manzill Men Hay

Jalwa Zaar e Aatish e Dozakh Hamaar Dil Sahi

Fitna e Shor e Qayamat Kiss Ki Aab o Gill Men Hay

Hay Dil Shoreeda e GHALIB Talism e Pech o Taab

Rehm Kar Apni Tamanna Par Keh Kiss Mushkill Men Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -