دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی
دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی

  

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی

دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی​

شق ہو گیا ہے سینہ خوشا لذّتِ فراغ

تکلیفِ پردہ داریِ زخمِ جگر گئی​

وہ بادہ شبانہ کی سر مستیاں کہاں

اٹھیے بس اب کہ لذّتِ خوابِ سحر گئی​

اُڑتی پھرے ہے خاک مری کوئے یار میں

بارے اب اے ہوا ہوسِ بال و پر گئی​

دیکھو تو دل فریبیِ اندازِ نقشِ پا

موجِ خرامِ یار بھی کیا گل کتر گئی​

ہر بو‌الہوس نے حسن پرستی شعار کی

اب آبروئے شیوہ اہلِ نظر گئی​

نظّارے نے بھی کام کیا واں نقاب کا

مستی سے ہر نگہ ترے رخ پر بکھر گئی​

فردا و دی کا تفرقہ یک بار مٹ گیا

کل تم گئے کہ ہم پہ قیامت گزر گئی​

مارا زمانے نے اسدللہ خاں تمہیں

وہ ولولے کہاں وہ جوانی کدھر گئی

شاعر: مرزا غالب

Dil Say Tiri Nigaah Jigar Tak Utar Gai

Donon Ko Ik Adaa Men Razamand Kar Gai

Shaq Ho gaya Seena Khosh, Lazzat e Faraagh

Takeef e  Parda Daari e Zakhm e Jigar Gai

Wo Baad e Sahabaana Ki Sarmastyaan kahan

Uthiay Bss Ab,Keh Lazzat e Khaab e Sahar Gai

Urrti Phiray Hy Khaak Miri Koo e Yaar Men

Baaray Ab Ay Hawa, Hawas e Baal o Par Gai

Dekho To Dil Faraibi e Andaaz e Naqsh e Paa

Moj e Khraam e  Yaar Bhi Kaya Gul Katar Gai

Har Bol Hawas Nay Husn Parasti Shiaar Ki

Ab Aabru e Shewa e Ehl e Nazar Gai

Nazzaaray Nay Bhi Kaam Kaya Waan Naqaab Ka

Masti Say Har Nigah Tiray Rukh Par Bikhar Gai

Farda Wadi Ka Tafriqa Yak Baar Mitt Gaya

Kall Tum Gaey Keh Ham Pe Qayaamat Guzar Gai

Maara Zamaanay NAy ASAD ULLAH KHAN Tumhen

Wo Walwalay Kahan , Wo Jawaani Kidhar Gai

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -