دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے؟

دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے؟
دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے؟

  

دلِ ناداں تجھے ہوا کیا ہے؟

آخر اس درد کی دوا کیا ہے؟

ہم ہیں مشتاق اور وہ بےزار

یا الٰہی یہ ماجرا کیا ہے؟

میں بھی منہ میں زبان رکھتا ہوں

کاش پوچھو کہ مدّعا کیا ہے

جب کہ تجھ بن نہیں کوئی موجود

پھر یہ ہنگامہ اے خدا کیا ہے؟

یہ پری چہرہ لوگ کیسے ہیں؟

غمزہ و عشوہ و ادا کیا ہے؟

شکنِ زلفِ عنبریں کیوں ہے

نگہِ چشمِ سرمہ سا کیا ہے؟

سبزہ و گل کہاں سے آئے ہیں؟

ابر کیا چیز ہے؟ ہوا کیا ہے؟

ہم کو ان سے وفا کی ہے امّید

جو نہیں جانتے وفا کیا ہے؟

ہاں بھلا کر ترا بھلا ہو گا

اَور درویش کی صدا کیا ہے؟

جان تم پر نثار کرتا ہوں

میں نہیں جانتا دعا کیا ہے؟

میں نے مانا کہ کچھ نہیں غالب

مفت ہاتھ آئے تو برا کیا ہے

شاعر: مرزا غالب

Dil e Nadaan, Tujhay Hua Kaya Hay

Aakhir Iss Dard Ki Dawaa Kaya Hay

Ham Hen Mushtaq Aor Wo Bezaar

Yaa Elaahi Yeh Maajra Kaya Hay

MAin Bhi Munh Mem Zubaan Rakhta Hun

Kaash Poochen Keh Mudaa Kaya Hay

Jab Keh Jujh Bin Nahen Koi Mojood

Phir Yeh Hangama Ay KHUDA Kaya Hay

Yeh Pari Chehra Log Kaisay Hen

Ghamz  o Ushwa o Adaa Kaya Hay

Shikan e Zulf e Amnbareen Kiun Hay

Nigh e Chasshm e Surma Saa Kaya Hay

Sabza o Gull Kahan Say Aaey Hen

Abr Kaya Cheez Hay , Hawaa Kaya Hay

Ham Ko Un Say Wafa Ki Hay Umeed 

Jo  Nehen Jaantay Wafaa Kaya Hay

Haan, Bhala Kar , Tira Bhala Ho Ga

Aor Darvesh Ki Duaa Kaya Hay

Jaan Tum Par Nisaar Kartay Hen

Main Nahen Jaanta Dua Kaya Hay

Main Nay Maana Keh Kuch Nahen GHALIB

Muft Haath Aaey To Bura Kaya Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -