پھر کچھ اک دل کو بیقراری ہے

پھر کچھ اک دل کو بیقراری ہے
پھر کچھ اک دل کو بیقراری ہے

  

پھر کچھ اک دل کو بیقراری ہے

سینہ جویائے زخمِ کاری ہے

پھِر جگر کھودنے لگا ناخن

آمدِ فصلِ لالہ کاری ہے

قبلۂ مقصدِ نگاہِ نیاز

پھر وہی پردۂ عماری ہے

چشم دلاّلِ جنسِ رسوائی

دل خریدارِ ذوقِ خواری ہے

وُہ ہی صد رنگ نالہ فرسائی

وُہ ہی صد گونہ اشک باری ہے

دل ہوائے خرامِ ناز سے پھر

محشرستانِ بیقراری ہے

جلوہ پھر عرضِ ناز کرتا ہے

روزِ بازارِ جاں سپاری ہے

پھر اسی بے وفا پہ مرتے ہیں

پھر وہی زندگی ہماری ہے

پھر کھلا ہے درِ عدالتِ ناز

گرم بازارِ فوجداری ہے

ہو رہا ہے جہان میں اندھیر

زلف کی پھر سرشتہ داری ہے

پھر دیا پارۂ جگر نے سوال

ایک فریاد و آہ و زاری ہے

پھر ہوئے ہیں گواہِ عشق طلب

اشک باری کا حکم جاری ہے

دل و مژگاں کا جو مقدمہ تھا

آج پھر اس کی روبکاری ہے

بے خودی بے سبب نہیں غالب

کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے

شاعر: مرزا غالب

Phir Kuch Ik Dil Ko Beqaraari Hay

Seena e Jayaa e Zakhm Kaari Hay

Phir jigar KhodnayLaga Naakhun

Aamad e fasl e Laala Kaari Hay

Qiblaa e Maqsad Nigaah e Nayaaz

Phiur Wahi Prda e Amaari Hay

Chashm e Dallaal e Jins e Ruswaai

Dil Kahreedaar e Zoq e Khaari Hay

Wo Hi Sad Rang Naar Fusaai

Wo Hi Sad Gooan Ashkbaari Hay

Dil Hawaa e Khiraam e Naaz SayPhir

Meshar Sataan e Beqaraari Hay

Jalwa Phir Arz e Naaz Karta Hay

Roz e  Bazaar  e Jaansipaari Hay

Phir Usi Bewafaa Pe Martay Hen

Phir Wahi Zindagi Hamaari Hay

Phir Khula Hay Dar e Adaalat e Naaz

Garm Bazaar e Faojdaari Hay

Ho Raha Hay Jahaam Men Andhera

Zulf Ki Phir Sarishta Daari Hay

Phir Dia Paara e Dil Nay Sawaal

Aik Faryaad o Aah o Zaari Hay 

Phir Huay Hen Gawaah e Eshq Talab

Ashk Baari Ka Hukm Jaari Hay

Dil o Mizzgaan Ka Jo Muqaddma Tha

Aaj Phir Uss Ki Robkaari Hay

Be Khudi Be Sabab Nahen GHALIB

Kuch To Hay Jiss Ki Parda daari Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -