ظلمت کدے میں میرے شبِ غم کا جوش ہے

ظلمت کدے میں میرے شبِ غم کا جوش ہے
ظلمت کدے میں میرے شبِ غم کا جوش ہے

  

ظلمت کدے میں میرے شبِ غم کا جوش ہے

اک شمع ہے دلیلِ سحر سو خموش ہے

نے مژدۂ وصال نہ نظّارۂ جمال

مدّت ہوئی کہ آشتئ چشم و گوش ہے

مے نے کِیا ہے حسنِ خود آرا کو بے حجاب

اے شوق یاں اجازتِ تسلیمِ ہوش ہے

گوہر کو عقدِ گردنِ خوباں میں دیکھنا

کیا اوج پر ستارۂ گوہر فروش ہے

دیدار بادہ، حوصلہ ساقی، نگاہ مست

بزمِ خیال مے کدۂ بے خروش ہے

اے تازہ واردانِ بساطِ ہوائے دل

زنہار اگر تمہیں ہوسِ نائے و نوش ہے

دیکھو مجھے! جو دیدۂ عبرت نگاہ ہو

میری سنو! جو گوشِ نصیحت نیوش ہے

ساقی بہ جلوہ دشمنِ ایمان و آگہی

مطرب بہ نغمہ رہزنِ تمکین و ہوش ہے

یا شب کو دیکھتے تھے کہ ہر گوشۂ بساط

دامانِ باغبان و کفِ گل فروش ہے

لطفِ خرامِ ساقی و ذوقِ صدائے چنگ

یہ جنّتِ نگاہ وہ فردوسِ گوش ہے

یا صبح دم جو دیکھیے آ کر تو بزم میں

نے وہ سرور و سوز* نہ جوش و خروش ہے

داغِ فراقِ صحبتِ شب کی جلی ہوئی

اک شمع رہ گئی ہے سو وہ بھی خموش ہے

آتے ہیں غیب سے یہ مضامیں خیال میں

غالب صریرِ خامہ نوائے سروش ہے

شاعر: مرزا غالب

Zulmat Kaday Men Meray Shab e Gahm ka Josh Hay

Ik Shama Hay Daleel e Sahar , So Khamosh Hay

Nay Muzzda e Visaal. Na Nazzaara e Jamaal

Muddat Hui Hay Keh Aashti  e Chashm e Gosh Hay

maY nay Kaya Hay Husn e Khud aara Ko Behijaab

Ay Shoq! yaan Ijaazat e tasleem e Hosh Hay

Gohar Ko Aqdan e gardan e Khoobaan men Dekhna

Kaya Aoj Par Sitaara e Gohar Farosh Hay

Dedaar Baada , Hosla Saaqi e Nigaah Mast Ka

Bazm e  Kahyaal Mekadaa e Bekharosh Hay

Ay Taaza Wardaan e Basaat e Hawaa e Dil

Zunhaar Agar Tumhen Hawas e Naad Nosh hay

Dekho Mujahy Jo Deeda e Ebrat Nigaah Ho

Meri Suno Jo Gosh e Naseehat Nayosh Hay

Saqi  Bajalwa Dushman e Emaan o Aagahi

Matrab Ba Nagma Rahzan e Tamkeen o Hosh Hay

Yaashab Ko Dekhtay Thay Keh Har Gosha e Bisaat

Damaan e Baaghbaan o Kaf e Gull Farosh Hay

Lutf e Khiraam Saqi O Zoq Sadaa e Chang

Yeh Jannat e Nigaah, Wo Firdous Gosh Hay

Ya Subh e Dam Jo Dekhiay Aa  Kar To Bazm e Men

Nay Wo Saroor o Soz an Josh o Khrosh Hay

Daagh e faraaq e Sohbat e Shab Ki Jali Hui

Ik Shama  Reh Gai Hay So Wo  Bhi Khmosh Hay

Aatay Hen Ghaib Say Yeh  Mazmeen khayaal Men

GHALIB Sareer e Khaam Nawa e Sarosh Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -