آ   کہ مری جان کو قرار نہیں ہے

آ   کہ مری جان کو قرار نہیں ہے
آ   کہ مری جان کو قرار نہیں ہے

  

آ  کہ مری جان کو قرار نہیں ہے

طاقتِ بیدادِ انتظار نہیں ہے

دیتے ہیں جنّت حیاتِ دہر کے بدلے

نشّہ بہ اندازۂ خمار نہیں ہے

گِریہ نکالے ہے تری بزم سے مجھ کو

ہائے کہ رونے پہ اختیار نہیں ہے

ہم سے عبث ہے گمانِ رنجشِ خاطر

خاک میں عشاق کی غبار نہیں ہے

دل سے اٹھا لطفِ جلوہ ‌ہاۓ معانی

غیرِ گل آئینۂ بہار نہیں ہے

قتل کا میرے کیا ہے عہد تو بارے

وائے اگر عہد استوار نہیں ہے

تو نے قسم مے کشی کی کھائی ہے غالب

تیری قسم کا کچھ اعتبار نہیں ہے

شاعر: مرزا غالب

Aa Keh Miri Jaan Ko Qaraar Nahen Hay

Taaqat e Bedaad e Intezaar Nahen Hay

Detay Hen Jannat Hayaat e Dehr k Badlay

Nashha Ba Andaaza e Khumaar Nahen Hay

Girya Nikaalay Hay Trir Bazm Say Mujkh Ko

Haaey Keh Ronay Pe Ekhtayaar Nahen

Ham SayAbas  Hay Gumaan e Ranjish e Khaatir

Khaak Men Ushaak Ki Ghubaar Nahen Hay

Dil Say Utha Lytf jalwa haa e maani

Ghir e Gull Aaina e Bahaar Nahen Hay

Qatl Ka Meray Kia Hay Ehd To Baaray 

Waaey Agar Ehd Ustawaar Nahen Hay

Tu Nay Qasam Maykashi  Ki Khaai hay GHALIB

Teri Qasam Ka Kuch Aitbaar Nahen Hay

Powr; Mirz Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -