دیپالپور سے روز نامہ پاکستان کے نمائندہ الحاج عطاء الرحمن لکھوی انتقال کرگئے 

دیپالپور سے روز نامہ پاکستان کے نمائندہ الحاج عطاء الرحمن لکھوی انتقال ...

  

دیپال پور(میاں محمد عباس، نمائندہ  پاکستان) دیپالپور کی مثبت صحافت کا درخشندہ آفتاب اور صحافت کا ایک سنہری باب ہمیشہ ہمیشہ کے لیے بند ہو گیا۔ دیپالپور پریس کلب کے بانی بابائے صحافت، دیپالپور سول سوسائٹی کے ماتھے کا جھومر، انتہائی ملنسار، بے ضرر، خوش اخلاق، انتہائی اعلی و ارفع، دیدہ زیب شخصیت کے مالک بزرگ سینئر ترین صحافی، ممتاز ماہر تعلیم، گورنمنٹ ایلیمنٹری بوائز سکول نمبر 2 دیپالپور کے سابق ہیڈ ماسٹر ضلع اوکاڑہ کے ممتاز مذہبی و سیاسی ”لکھوی خاندان“کے بزرگ رہنما سابق ماہر تعلیم عبدالرحمن لکھوی کے بڑے بیٹے، عبیدالرحمن عابد لکھوی کے بھائی، علی عمیر لکھوی کے والد روزنامہ پاکستان سے وابسطہ، استاد الصحافیاں،الحاج عطا الرحمن لکھوی بانی مکتبہ اسلامیہ بک ڈپو صدر بازار دیپال پور سٹی گزشتہ روز حرکت بند ہوجانے کی وجہ سے انتقال کر گئے۔ مرحوم ایک سال سے کینسر کے جان لیوا مرض میں مبتلا تھے۔ نماز جنازہ دیپال پور منی سٹیڈیم کے وسیع سبززار گراؤنڈ میں ادا کی گئی۔ مرحوم کی نماز جنازہ پروفیسر ڈاکٹر محمد حماد لکھوی پنجاب یونیورسٹی آف ڈین آف اسلامک سٹیڈیز شیخ زید اسلامک سنٹر پنجاب یونیورسٹی لاہور نے پڑھائی۔ مرحوم کو سینکڑوں سوگواروں کی موجودگی میں آبائی قبرستان سخی سیدن سائیں میں سپرد خاک کر دیا گیا۔ الحاج عطا الرحمن لکھوی آغا شورش کاشمیری، مجید نظامی، مجیب الرحمن شامی، فخر سادات سید محمد غوث گیلانی عرف چن پیر شاہ کے قریبی دست راست اور رفقاء میں شامل تھے۔ مرحوم کی نماز جنازہ میں لکھوی خاندان کے سینکڑوں افراد سمیت سیاسی وسماجی، دینی، کاروباری، صحافتی،وکلاء، انجمن تاجران،اعلی افسران، سابق صدر بار ایسوسی ایشن، سابق جنرل سیکرٹری بار ایسوسی ایشن دیپال پور، سابق ممبران قومی و صوبائی اسمبلی، سابق ناظمین، سابق نائب ناظمین، سابق کونسلرز، عمائدین علاقہ اور شہریوں نے ہزاروں کی تعداد میں شرکت کی۔

انتقال

مزید :

صفحہ آخر -