بس سٹینڈ کی بندش ٹرانسپورٹروں کی معاشی قتل کے مترادف

  بس سٹینڈ کی بندش ٹرانسپورٹروں کی معاشی قتل کے مترادف

  

 پشاور(سٹی رپورٹر)پبلک ٹرانسپورٹروں نے پشاور کے بس سٹینڈز کی بندش کو ٹرانسپورٹروں کا معاشی قتل قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ کورونا صرف بین الاضلاعی اور بین الصوبائی ٹرانسپورٹ سے پھیلتاہے اور لوکل ٹرانسپورٹ بس رپیڈٹرانزٹ انتظامیہ کے نظروں سے اوجھل ہے۔پبلک ٹرانسپورٹ اونر ایسوسی ایشن کے صدر خان زمان، متحدہ ٹرانسپورٹ کے صدر نورمحمد مہمند اور منی بس ٹرانسپورٹ کے صدر یارمحمد آفریدی نے کہاہے کہ بین الاضلاعی اور بین الصوبائی ٹرانسپورٹ بند کرنے سے ٹرانسپورٹ برادری کا کروڑ وں روپے روزمرہ نقصان ہورہاہے جبکہ کنڈیکٹر اور ڈرائیورں کے ساتھ مالکان کے گھروں میں فاقوں کی نوبت آگئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ مسافربھی خوارہورہے ہیں اور انتظامیہ اپنے فیصلے پر نظرثانی کرے۔ انہوں نے کہاکہ لوکل ٹرانسپورٹ بی آرٹی بین الاضلاعی اور بین الصوبائی ٹرانسپورٹ سے زیادہ کورونا پھیلا? کا سبب بن رہی ہے لیکن حکومت نے صرف پبلک ٹرانسپورٹروں کو قربانی کا بکرا بنایا ہے، پبلک ٹرانسپورٹروں پر گاڑی کھڑی کرکے اڈے سیل کردی ہیں اور اگر حکومت نے اپنی فیصلے پر نظرثانی نہیں کی تو سڑکوں پر نکل کر احتجاج کا سلسلہ شروع کرینگے۔ انہوں نے کہاکہ بین الاضلاعی اور بین الصوبائی ٹرانسپورٹ بند کرنا ٹرانسپورٹروں کا معاشی قتل عام ہے اور حکومت نے ابھی تک ایک روپیہ بھی کورونا ریلیف فنڈ میں ٹرانسپورٹروں کی امداد نہیں کی۔ انہوں نے کہاکہ بین الاضلاعی اور بین الصوبائی ٹرانسپورٹ میں ماسک، سینیٹائزر اور فاصلے کے اصول اپنائے جاتے ہیں لیکن اس کے باوجود پبلک ٹرانسپورت بند کردی جو ظلم ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -