چکدرہ‘ حکومت کے پاس فنڈز نہیں تو ٹینڈرز کیو ں کرتے؟

    چکدرہ‘ حکومت کے پاس فنڈز نہیں تو ٹینڈرز کیو ں کرتے؟

  

چکدرہ(تحصیل رپورٹر) حکومت کے پاس فنڈز نہیں تو ٹینڈرز کیو ں کرتے ہے کیا ایم پی اے اور ایم این اے کو خوش کرنے کے علاوہ کچھ نہیں،مہنگائی اسمان سے باتیں کرتے ہے اور ہمارا پریمیم بڑا دی جائے حکومت کام لیٹ کرنے پرٹھیکدارار کو جرمانہ کرتے ہے لیکن حکومت فنڈز نہ دینے پر کوئی قانون نہیں ہے ملاکنڈ ڈویثرون ٹیکس فری زون لیکن ٹھیکدار سے ہر قسم ٹیکس کاٹ لیا جاتا ہے کنٹریکٹرزایسوسی ایشن ملاکنڈ ڈویژن کا وزیراعلیٰ ہاؤس کے گھر مٹہ میں احتجاجی دھرنے اور عدالت جانے کااعلان، اکرام اللہ خان۔ دھرنے کی تاریخ کااعلان جلد کیاجائے گا،غیر قانونی ٹیکس وصولی اورانتظامی منظوری کے بغیر ٹینڈرز قابل قبول نہیں، ایسوسی ایشن کے عہدیداروں کی چکدرہ پریس کلب میں پریس کانفرنس، تفصیلات کے گورنمنٹ کنٹریکٹرز ایسوسی ایشن ملاکنڈ ڈویژن کے صدر انجینئر اکرام اللہ خان اور جنرل سیکرٹری عمران اللہ ٹھاکر نے سینئر نائب صدر رحمت منیر، ظاہرخان، جاوید اختر، دوست محمد،جمال خان اور رحیم اللہ خان سمیت دیگر کے ہمراہ پرہجوم پریس کانفرنس کرتے ہوئے تشویش کااظہار کیاکہ ٹینڈرزہورہے ہیں مگر فنڈز دستیاب ہوتے ہیں نہ سائیڈز کلیئر ہوتے اور نہ ہی ان ٹینڈرز کی انتظامی منظوری ہوتی ہے اورمحض ایم پی ایزاورایم این ایز کو خوش کرنے کے لئے اخبارمیں اشتہار دیاجاتاہے، ان ٹینڈرزمیں ٹھیکداروں کی سی ڈی آر کی صورت میں کروڑوں روپے کی رقم بند ہوجاتی ہے جبکہ اس میں کوئی فنڈز ریلیز نہیں کیاجاتااور قابل تشویش امر یہ کہ کروڑوں روپے کے منصوبے محض چند ہزار روپے کا ایلوکیشن ہوتاہے، انہوں نے کہاکہ ملاکنڈ ڈویژن اور ضم اضلاع ٹیکس سے مستثنیٰ ہیں مگر اس کے باوجود ٹھیکیداروں سے غیر قانونی ٹیکس وصول کیاجاتاہے جو کہ انتہائی ظلم ہے،انہوں نے کہاکہ ٹھیکیداروں کی قوت برداشت ختم ہوچکی ہے اور کابینہ کے اجلاس میں  ٹیکس وصولی کے معاملے پر سیکرٹری فنانس،ایف بی آر اور دیگر متعلقہ حکام سے بات چیت کرنے کے لئے کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جبکہ غیر قانونی ٹینڈرزکے خلاف عدالت جانے، اورقوم کی عدم ادائیگی پر مٹہ سوات میں وزیراعلیٰ ہاؤس کے سامنے احتجاجی دھرنادینے کافیصلہ کیاگیاہے اور عنقریب دھرنے کااعلان کیاجائے گااس کے بعد ڈویژن بھر میں جاری ترقیاتی منصوبوں پر کام بند کیاجائے گا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -