بچے حوالگی کے کیس میں دو بچے باپ سے لے کر ماں کے حوالے

بچے حوالگی کے کیس میں دو بچے باپ سے لے کر ماں کے حوالے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہورہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس ملک شہزاد احمد نے بچے حوالگی کے کیس میں دو بچے باپ سے لے کر ماں کے حوالے کر دئیے،عدالتی فیصلہ سنتے ہی باپ پھوٹ پھوٹ کر رو پڑا جبکہ بچے بھی باپ سے بچھڑنے پر چیخیں مار مار کرروتے رہے ۔شیخوپورہ کی رہائشی خاتون شہناز بی بی نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ اسکے خاوند نے لڑائی جھگڑے کے بعد اسے مار پیٹ کر گھر سے نکال دیا اور بچے چھین لئے۔خاتون کے شوہر شبیر نے عدالت کو آگاہ کیا کہ اسکی بیوی لڑائی جھگڑے کے بعد اپنے بھائیوں کو گھر بلا لیا ،سالوں نے گھر آتے ہی اس کی پٹائی کر دی۔خاتون کے شوہر نے عدالت کو بتایا کہ مار کھانے کے بعداب اسکی اپنی بیوی سے صلح ممکن نہیں ،اس کے بچوں کو ان کے اپ کے ہمراہ جانے کی اجازت دی جائے تاہم عدالت نے سات سالہ علی رضا اور پانچ سالہ زینب بی بی کو باپ سے لے کر ماں کے حوالے کر دیا۔عدالتی فیصلہ سنتے ہی بچوں کا باپ بے اختیار رو پڑا جبکہ بچے اپنی ماں کی بجائے باپ کے ہمراہ جانے کے لئے چیخیں مار مار کر روتے دکھائی دئیے۔

مزید :

صفحہ آخر -