پی ٹی وی پر خطاب کرنے دیا جائے :عمران ،حکومت کا انکار ،خورشید شاہ کی حمایت ،بلاول کا اعتراض

پی ٹی وی پر خطاب کرنے دیا جائے :عمران ،حکومت کا انکار ،خورشید شاہ کی حمایت ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


اسلام آباد،لاہور( اے این این ،نمائندہ خصوصی) ) تحریک انصاف نے اتوار کو سرکاری ٹی وی (پی ٹی وی) پر چیئرمین عمران خان کے قوم سے خطاب کے لیے مراسلہ بھیج دیا۔پی ٹی وی کے قائم مقام مینیجنگ ڈائریکٹر عمران گردیزی کے نام لکھے گئے مراسلے میں پی ٹی آئی کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات نعیم الحق کا کہنا ہے کہ جیسا کہ سب ہی جانتے ہیں کہ پاناما لیکس کے تحت افشا ہونے والی دستاویزات سے معلوم ہوا ہے کہ کس طرح عالمی رہنماؤں اور شخصیات نے اپنے کالے دھن کو سفید کرنے کے لیے غیر قانونی آف شور کمپنیاں قائم کیں۔مراسلے کے مطابق وزیراعظم نواز شریف کے خاندان کا نام بھی ان دستاویزات میں شامل ہے۔مراسلے میں مزید لکھا گیا ہے کہ اپنے دفاع کے لیے وزیراعظم نواز شریف نے 5 اپریل کو قوم سے خطاب کیا اور پاناما لیکس کے معاملے پر اپنی اور اپنے خاندان کی پوزیشن کو واضح کرنے کی ہر ممکن کوشش کی۔مزید کہا گیا کہ عوام کے ٹیکس پر چلنے والے پی ٹی وی پر پاکستان کے ہر شہری کا حق ہے۔لیکن بدقسمتی سے پاناما لیکس کے بعد وزیراعظم نواز شریف، وزیر اطلاعات پرویز رشید اور حکمران جماعت مسلم لیگ (ن) کے بہت سے ارکا ن اسمبلی شوکت خانم ہسپتال سے متعلق غلط معلومات پھیلانے کے لیے پی ٹی وی کا استعمال کرچکے ہیں۔مراسلے کے مطابق یہ پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کا حق ہے کہ وہ بھی پی ٹی وی پر قوم سے خطاب میں شوکت خانم ہسپتال پر لگائے گئے بے بنیاد الزامات کا جواب دیں اور پاناما لیکس کے حوالے سے اپنی پوزیشن کی وضاحت کریں۔آخر میں پی ٹی وی حکام سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ 10 اپریل کو شام 6 بجے عمران خان کے قوم سے خطاب کے سلسلے میں تمام انتظامات کریں۔ساتھ ہی یہ بھی لکھا گیا ہے کہ عمران خان اپنے آفس سے براہ راست خطاب کریں گے۔جبکہ دوسری طرف چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نوازشریف کواب خود استعفیٰ دے دینا چاہیے اور اگر پاناما لیکس پر شفاف تحقیقات نہ ہوئی تو قوم کو سڑکوں پر نکالیں گے اور اس بار دھرناکے لئے ڈی چوک نہیں بلکہ رائے ونڈ کا رخ کریں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز یہاں چیئرمین سیکرٹریٹ میں پی ٹی آئی کے مشاورتی اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ پاناما لیکس کے انکشافات سے ثابت ہوگیا کہ (ن) لیگ بڑے پیمانے پر لوٹ مار میں ملوث ہے جس نے کرپشن کا پیسہ باہر منتقل کیا جب کہ پاناما لیکس کے معاملے پر شریف برادران کا بچ جانا اپوزیشن کی ناکامی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس کی سربراہی میں کمیشن کے مؤقف پر قائم ہیں، قوم کو پتا چل جانا چاہیے کہ فیصلہ کن وقت آگیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ اگر شفاف تحقیقات نہ ہوئی تو پیپلزپارٹی اور (ن) لیگ کے کارکنان سمیت پوری قوم کو سڑکوں پر لے کر آئیں گے اور سیاسی تحریک کو ایوانوں اور سڑکوں پر چلائیں گے جب کہ اس بار ڈی چوک نہیں بلکہ رائے ونڈ کا رخ کریں گے جس کی تیاروں کا سلسلہ شروع ہوچکا ہے، 24 اپریل کو پورا لائحہ عمل بتاؤں گا۔چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ جمہوریت میں جب کسی لیڈر پر ایسے الزامات لگتے ہیں تو وہ خود جواب دیتے ہیں لیکن یہاں (ن) لیگ کے درباری جواب دے رہے ہیں، انہیں نہیں پتا کہ آئس لینڈ کے وزیراعظم نے خود جواب دیا اور استعفیٰ دیا اور ڈیوڈ کیمرون خود جواب دے رہا ہے لہٰذا شریف خاندان کو بھی چاہیے وہ خود جواب دے، (ن) لیگ کے پارلیمانی رہنما اپنے لیڈر کی کرپشن بچانے کی کوشش کررہے ہیں اور کبھی شوکت خانم تو کبھی پیپلزپارٹی تو کبھی اوروں پر انگلیاں اٹھارہے ہیں لیکن یہ ان کا معاملہ نہیں شریف خاندان کو ہی جواب دینا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ہم اکیلے لڑنے کے قائل ہیں، اپنی قوم کو ساتھ ملانا چاہتا ہوں کیونکہ یہ قوم کی جنگ ہے، حکومت نے پاناما لیکس پر پی ٹی وی پر تقریر نہ دکھا کر سچ چھپانے کی کوشش کی۔ انہوں نے کہاکہ پی ٹی وی حکومت کی جاگیر نہیں بلکہ عوام کے ٹیکسوں پر چلتا ہے،اگر وزیر اعظم آپنی ذاتی وضاحت پی ٹی وی پر آ کردیتے ہیں تو عوام کا پورا پورا حق ہے کہ حقیقت سے آگاہ ہوں ۔عمرن خان نے کہا کہ نوازشریف نے پی ٹی وی پر پاکستان نہیں بلکہ اپنے خاندان کو بچانے کے لیے اور ذاتی وضاحت کے لئے قوم سے خطاب کیا اسی لیے مجھے بھی موقع ملنا چاہیے تاکہ میں قوم کو دوسرا پہلو بتاؤں کیونکہ پی ٹی وی قومی اثاثہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو جو بھی کہیں ہم ملک کی دوسری بڑی جماعت ہیں، ہم نے الیکشن میں دوسرے نمبر پر سب سے زیادہ ووٹ لیے، ہمارا حق بنتا ہے ہم نوازشریف کو جواب دیں۔
عمران خان

اسلام آباد ( اے این این )وزیراطلاعات ونشریات سینیٹر پرویز رشید نے کہا ہے کہ پی ٹی وی پر قوم سے خطاب کا حق صرف وزیراعظم اور صدر کو حاصل ہے،عمران خان کا خطاب کا مطالبہ صرف سیاسی چال ہے ،اجازت دی تو اسمبلی میں ایک نشست والا بھی قوم سے خطاب کا مطالبہ کرے گا۔ اس لئے ایسا ممکن نہیں ہے ۔نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے پرویز رشیدنے کہا کہ سرکاری ٹی وی پر خطاب صرف وزیراعظم اور صدر کر سکتے ہیں عمران خا ن کو اجازت دی تو اس کے بعد اسمبلی میں ایک نشست رکھنے والا بھی قوم سے خطاب کا مطالبہ کرے گا۔ انہوں نے کہاکہ قومی اسمبلی میں سپیکر اور چیئرمین سینیٹ کی اجازت سے تقریر ٹی وی پر دکھائی جاتی ہے اور خبروں میں حکومت کو جتنا وقت دیا جاتا ہے اتنا اپوزیشن کو بھی دیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے دھرنے کے دوران بھی قوم سے خطاب کئے ان کی پریس کانفرنس یا جلسے سے خطاب تمام چینل نشر کرتے ہیں ۔
پرویز رشید

اسلام آباد،کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) اپوزیشن رہنماؤں نے عمران خان کے پی ٹی وی پر خطاب کا مطالبہ جائز قرار دیدیا۔ قائد حزب اختلاف خورشید شاہ کہتے ہیں اپوزیشن کے موقف کو براہ راست عوام تک نہیں پہنچایا جاتا۔پاناما لیکس کا معاملہ چلا تو وزیراعظم نے قوم سے ذاتی خطاب کیا جس پر اپوزیشن جماعتوں نے خوب شور مچایا۔ عمران خان نے تو پی ٹی وی پر اپنے خطاب کیلئے مراسلہ لکھا تو اپوزیشن رہنماؤں نے ان کے مطالبے کی پرزور حمایت کی۔ قائد حزب اختلاف خورشید شاہ نے کہا کہ پی ٹی وی پر اپوزیشن رہنماؤں کی تقریر بھی براہ راست دکھائی جائے۔ عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کا کہنا تھا کہ پی ٹی وی ان کے ٹیکسوں سے چلتا ہے۔ عمران خان کو قوم سے خطاب کا موقع دیا جائے۔جبکہ دوسری طرف پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ عمران خان کس حیثیت میں سرکاری ٹی وی پر خطاب کریں گے،اپوزیشن لیڈر سیدخورشید شاہ ہیں عمران خان نہیں۔جمعہ کو اپنے ٹوئیٹر پیغام میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اپوزیشن لیڈر عمران خان نہیں بلکہ سید خورشید شاہ ہیں۔
اپوزیشن رہنماء

مزید :

صفحہ اول -