ماہرین کا عالمی درجہ حرارت میں 3سے 5فی صد اضافے کا امکان

ماہرین کا عالمی درجہ حرارت میں 3سے 5فی صد اضافے کا امکان

راولپنڈی (اے پی پی) ماہرین ماحولیات نے خبردار کیا ہے کہ کرہ ارض کے درجہ حرارت میں مسلسل اضافہ کے باعث مستقبل قریب میں عالمی درجہ حرارت میں ۳ سے ۵ فیصد تک اضافے کا امکان ہے کے امکانات پیدا ہو گئے ہیں۔ماہرین نے کہاہے کہ کرہ ارض کے درجہ حرارت کو معتدل رکھنے کا سب سے موثر اور کار آمد ذریعہ درخت ہیں لہذا دنیا بھر میں شجر کاری کا فروغ وقت کی ضرورت ہے ۔ماہرین کاکہنا ہے کہ ایک محتاط اندازے کے مطابق دنیا میں ہر سال ہزاروں افراد الٹراوائلٹ شعاعوں کی وجہ سے جلد ی بیماریوں کا شکار ہو کر موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔ان خطرات سے نمٹنے اور انسانی صحت کے بچاؤ کی خاطر ماحول کی اصلاح کیلئے اجتماعی کوششوں کی ضرورت ہے۔کنزرویٹر آف فارسٹ راولپنڈی نارتھ سرکل اطہر شاہ کھگا نے جنگلات کی اہمیت کو مسلمہ قرار دیتے ہوئے کہاکہ ماحولیاتی آلودگی موجودہ دور کا ایک گمبھیر مسئلہ ہے اور درخت ہی اس پیچیدہ مسئلے کا ایک اچھا اور آسان ترین حل ہیں۔ بڑے پیمانے پر شجر کاری سے ماحول پر مثبت اثرات ہوتے ہیں۔ماحول کی اصلاح میں درخت انتہائی اہم کردار ادا کرتے ہیں۔

کیونکہ درخت جہاں ماحول کی خوبصورتی کا سبب بنتے ہیں وہیں ہوا کو صاف رکھنے، آندھی اور طوفانوں کا زور کم کرنے، آبی کٹاؤ کو روکنے، آکسیجن میں اضافے اور آب و ہوا کے توازن برقرار رکھنے میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں۔اطہر شاہ کھگا نے اے پی پی سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ ماہرین صحت کے مطابق ایک بڑا درخت63 ننھے منے بچوں کو آکسیجن مہیا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے جبکہ گندے نالوں کے دونوں اطراف لگائے جانے والے درختوں کی جڑیں پانی میں موجود گندے مادوں کو جذب کرکے ناگوار بو کم کرتی ہیں، جبکہ اس کے پتے اردگرد کے ماحول کو صاف ہوا مہیا کرتے ہیں۔ماہرین کے مطابق کسی بھی ملک کا 52 فیصد رقبہ جنگلات سے ڈھکا ہونا چاہئے۔ اس تناسب سے دیکھا جائے تو پاکستان میں جنگلات کا رقبہ انتہائی ناکافی ہے ۔کنزرویٹر آف فارسٹ راولپنڈی نارتھ سرکل اطہر شاہ کھگا نے زیادہ سے زیادہ شجر کاری کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہاکہ درخت زمین کا زیور ہیں، درختوں کی حفاظت کرکے ہم ملک کو جنت نظیر بناسکتے ہیں۔

جنگلات انسانی زندگی کے لئے اورجنگلی جانوروں کی بقاء کے لئے ضروری ہیں، جنگلات کسی جگہ کی آب وہوا کو تبدیل کرنے میں بھی اہم کردار اداکرتے ہیں اور انسانوں کو ماحولیاتی آلودگی سے بچاتے ہیں ۔ اطہر شاہ کھگا نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ جنگلات کی اہمیت و افادیت کے پیش نظر محکمہ جنگلات پنجاب اپنا کردار بخوبی ادا کر رہاہے اور فارسٹ راولپنڈی نارتھ سرکل نے بہاریہ شجر کاری مہم کے دوران مارچ تک تقریباً3لاکھ درخت لگائے ہیں جبکہ یہ شجر کاری مہم جون تک جاری رہے گی جس کے دوران مزید پودے بھی لگائے جائیں گے ۔انہوں نے کہاکہ درخت سرسبز پاکستان میں بڑی اہمیت کے حامل ہیں۔ ہر سال محکمہ جنگلات کی طرف سے پودے لگانے کی مہم زور وشور سے شروع کی جاتی ہے اور اس سلسلے میں عوام کو زیادہ سے زیادہ پودے لگانے کی ترغیب دی جاتی ہے۔ اطہر شاہ کھگہ فاریسٹ راولپنڈی نارتھ سرکل بہاریہ شجرکاری مہم 2018کے دوران راولپنڈی میں 17لاکھ پودے لگانے کا ہدف مقرر کیا تھا جس کے دوران مارچ تک 3لاکھ درخت لگائے گئے ۔کنزرویٹر فاریسٹ راولپنڈی نارتھ سرکل اطہر شاہ کھگہ نے بتایاکہ محکمہ جنگلات راولپنڈی نے شجر کاری مہم کے آغاز کے ساتھ ہی راولپنڈی ،اٹک ،گوجر خان ،کہوٹہ مری سمیت دیگر سرکاری جنگلات میں پودے لگانے کا عمل شروع کر دیا تھا ۔انہوں نے بتایاکہ بہاریہ شجر کاری مہم کے دوران مختلف اقسام کے پودے سرکاری جنگلات ،محکمہ دفاع ،نجی زمینوں اور سکولوں میں لگائے جائیں گے۔انہوں نے بتایاکہ بہاریہ شجر کاری مہم کے دوران نارتھ ڈویژن بشمول مری ،اٹک ،کوٹلی ستیاں ،پنجاڑ ،کروڑ ،کلر سیداں ، کہوٹہ جبکہ ساؤتھ سرکل گوجر خان ،ٹیکسلا اور راولپنڈی کے جنگلات میں پھلدار ،پھول دار ،سایہ دار اور جنگلی پودوں کے علاوہ چیڑھ کے پودے بھی لگائے جائیں گے۔

مزید : کامرس