سعودی عرب میں ٹریفک حادثہ، زخمیوں کو ہسپتال منتقل کردیا گیا، لیکن پھر 5 گھنٹے بعد کسی نے گاڑی میں جھانک کر دیکھا تو وہاں کیا چیز موجود تھی؟ دیکھ کر ہر کسی کے واقعی ہوش اُڑگئے کیونکہ وہاں خاتون۔۔۔

سعودی عرب میں ٹریفک حادثہ، زخمیوں کو ہسپتال منتقل کردیا گیا، لیکن پھر 5 گھنٹے ...
سعودی عرب میں ٹریفک حادثہ، زخمیوں کو ہسپتال منتقل کردیا گیا، لیکن پھر 5 گھنٹے بعد کسی نے گاڑی میں جھانک کر دیکھا تو وہاں کیا چیز موجود تھی؟ دیکھ کر ہر کسی کے واقعی ہوش اُڑگئے کیونکہ وہاں خاتون۔۔۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) حادثے کے وقت عام انسان کی پریشانی اور بوکھلاہٹ یقینی بات ہے لیکن ایمرجنسی ریسکیو سروس فراہم کرنے والے اہلکاروں سے ضرور توقع کی جاتی ہے کہ وہ ایسی حالت میں بھی اپنے حواس بحال رکھیں۔ بدقسمتی سے کبھی کبھار یہ اہلکار بھی ایسی بوکھلاہٹ کا مظاہرہ کرتے ہیں کہ سن کر عقل حیران رہ جائے۔ ایک ایسا ہی افسوسناک واقعہ سعودی عرب میں ایک ٹریفک حادثے کے بعد دیکھنے کو ملا۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

خلیج ٹائمز کے مطابق ضاحیہ بنت جابر عسیری نامی خاتون کی گاڑی کو اس وقت حادثہ پیش آیا جب وہ اپنے بیٹے کے ساتھ ابحاءکے لئے محو سفر تھیں۔ محائل روڈ پر العائد کے قریب ایک گاڑی نے ان کی گاڑی کو ٹکر ماری اور اس حادثے میں ضاحیہ بنت جابر کی موت واقع ہوگئی جبکہ ان کا بیٹا شدید زخمی ہوا۔ دوسری گاڑی میں سوار دو افراد بھی زخمی ہوئے اور ان سب زخمیوں کو محائل عسیر جنرل ہسپتال لیجایا گیا۔

جب ضاحیہ بنت جابر کا بیٹا ہوش میں آیا تو اس نے اپنی والدہ کے بارے میں پوچھا اور تب ایمرجنسی اہلکاروں کو احساس ہوا کہ وہ مرنے والی خاتون کی لاش جائے حادثہ پر گاڑی کے اندر ہی چھوڑ آئے تھے۔ زخمی بیٹے کی چیخ و پکار پر سول ڈیفنس اہلکار دوبارہ جائے حادثہ پر پہنچے اور حادثے میں تباہ ہونے والی گاڑی کی پچھلی سیٹ پر پڑی خاتون کی لاش کو ہسپتال منتقل کیا۔سعودی ریڈ کریسنٹ آرگنائزیشن کے ترجمان عسیر محمد بن حسن الشہری کا کہنا تھا کہ اس واقعے کے متعلق مزید معلومات حاصل کرنے کے لئے تحقیقات جاری ہیں۔

مزید : عرب دنیا