سو موٹو لینے کا شوق نہیں،بنیادی حقوق سے متعلق ازخودنوٹس کامطلب ان حقوق پرعملدرآمدکراناہے: چیف جسٹس آف پاکستان

سو موٹو لینے کا شوق نہیں،بنیادی حقوق سے متعلق ازخودنوٹس کامطلب ان حقوق ...
سو موٹو لینے کا شوق نہیں،بنیادی حقوق سے متعلق ازخودنوٹس کامطلب ان حقوق پرعملدرآمدکراناہے: چیف جسٹس آف پاکستان

  

کوئٹہ (ڈیلی پاکستان آن لائن)چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کا کہنا ہے کہ مجھے سوموٹولینے کا کوئی شوق نہیں،بنیادی حقوق سے متعلق ازخودنوٹس کامطلب ان پرعملدرآمدکراناہے،میں نے جتنے اقدامات کیے نیک نیتی سے کیے ہیں۔

کوئٹہ میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ سو موٹو ایکشن کا مقصد جانبداری یا ذاتی مطلب کیلیے نہیں ،ان کامقصد بنیادی حقوق کی فراہمی پر عمل درآمدکرانا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ تعلیم،صحت اورخوراک جیسے بنیادی حقوق سے متعلق سوموٹوایکشن لیے،جتنے اقدامات اور سو موٹو ایکشن لیے بنیادی حقوق سے متعلق تھے۔انہوں نے کہا کہ افسوس سے کہناپڑتاہے کہ آج تک بلوچستان سے بنیادی حقوق سے متعلق ایک بھی پٹیشن دائرنہیں ہوئی،اس خلا کوپر کرنے کیلیے از خود نوٹس لینے پڑے۔ چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ سما جی رہنماوں کی جانب سے بنیادی حقوق پرپٹیشن دائرنہیں کی گئیں،اس لیے بھی سوموٹوایکشن لینے پڑے۔انہوں نے کہاکہ میں وضاحت دینے کا پابند نہیں اور نہ ہی کوئی وضاحت پیش کر رہا ہوں،آپ کورائے بنانے سے پہلے حقائق جاننے چاہییں۔ان کا کہنا تھا کہہم عوام کوحقوق دلانےاورفرائض میں کوئی کوتاہی برداشت نہیں کریں گے،قاضی فائزعیسیٰ کی تعیناتی سےمتعلق پٹیشن لگانےمیں قطعاًکوئی بدنیتی نہیں تھی۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /بلوچستان /کوئٹہ