59لمپنیوں کیخلاف کاروائی کی ،کروڑوں مالیت کی ادویات ضبط کرلیں ،عامر محمود کیانی

59لمپنیوں کیخلاف کاروائی کی ،کروڑوں مالیت کی ادویات ضبط کرلیں ،عامر محمود ...

  

اسلام آباد(آن لائن)وفاقی وزیر برائے قومی صحت سروسز (این ایچ ایس) عامر محمود کیانی نے کہا کہ گزشتہ کچھ دنوں میں حکومت نے 59 کمپنیوں کی کروڑوں روپے مالیت کی 226 ادویات کو قبضے میں لیا ہے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’یہ کمپنیاں زیادہ سے زیادہ ریٹیل قیمتوں (ایم آر پیس) سے اضافی قیمتوں پر ادویات فروخت کررہی تھیں جس پر ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی پاکستان (ڈریپ) کو ان کمپنیوں کے خلاف کارروائی کی ہدایت کی گئی تھی۔انہوں نے کہا کہ ہم قیمتوں میں اضافے کو برداشت نہیں کریں گے کیونکہ یہ براہ راست غریب عوام پر اثر انداز کرتی ہے۔عامر محمود کیانی کا کہنا تھا کہ ادویات کی قیمتوں میں غیر قانونی اضافے میں ملوث دوا ساز کمپنیوں پر بھاری جرمانے عائد کیے گئے اور کراچی، لاہور اور پشاور میں ان کے خلاف آپریشن میں کروڑوں روپے کی ادویات کو قبضے میں لیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ ہم نے ان ادویات کی مینوفکچرنگ کو بھی روک دیا ہے جو ایم آر پیز کے مقابلے میں زائد قیمتوں پر فروخت ہورہی تھی، اس کے علاوہ نہ صرف ان کمپنیوں پر جرمانہ عائد کیا جارہا ہے بلکہ اضافی رقم بھی ان سے وصول کی جائے گی‘۔ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ روزانہ 65 ہزار صحت کارڈ پرنٹ کیے گئے ہیں اور سال کے اختتام تک تقریباً 5 کروڑ 50 لاکھ افراد مفت طبی علاج کے حصول کے قابل ہوں گے۔علاوہ ازیں ڈریپ کے صوبائی دفاتر کی جانب سے فیڈرل ڈرگ انسپیکٹر ز کو تجویز دی گئی کہ وہ ادویات کی قیمتوں کی تصدیق کریں اور اگر ادویات کی قیمتیں زائد پائیں تو ڈریپ ایکٹ 2012 اور ڈرگ ایکٹ 1976 کے تحت فوری کارروائی کی جائے۔اس حوالے سے ایک باضابطہ اعلامیے میں کہا گیا کہ ان دوا ساز کمپنیوں کے خلاف سخت کارروائی کا آغاز ہوگیا جنہوں نے غیر قانونی طور پر ادویات کی قیمتیں بڑھائیں، یہ ایکشن ان شکایات کے بعد کیا گیا جس میں بتایا گیا تھا کہ دوا ساز کمپنیوں نے حکومت کی جانب سے مقرر کی گئی ادویات کی قیمتوں میں زائد اضافہ کیا۔دوسری جانب فارما بیورو کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر عائشہ تیمی حق نے بتایا کہ بدقسمتی سے صورتحال بہت پیچیدہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ’حقیقت یہ ہے کہ 2013 میں حکومت کی جانب سے ادویات کی قیتموں میں 15 فیصد تک اضافہ کیا گیا لیکن اگلے ہی روز اس وقت کے وزیر اعظم نواز شریف نے اس نوٹیفکیشن کی واپسی کا حکم دیا لیکن کچھ کمپنیاں عدالت چلی گئی اور انہوں نے حکم امتناع حاصل کرلیا، جس کی وجہ سے ان کمپنیوں کی ادویات کی قیمتیں بڑھ گئی تاہم 60 فیصد مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ نہیں ہوسکا‘۔عائشہ تیمی حق کا کہنا تھا کہ 2015 میں حکومت نے ادویات کی صنعت کے نمائندوں اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مشاورت کے بعد ادویات کی قیمتوں کی پالیسی کا اعلان کیا لیکن ’اس پالیسی میں ہماری سفارشات کو شامل نہیں کیا گیا‘۔انہوں نے کہا کہ جب شاہد خاقان عباسی وزیر اعظم بنے تو اس وقت کے چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار نے نئی ڈرگ پالیسی بنانے کا حکم دیا اور اسے بنایا گیا لیکن روپے کی قدر میں گراوٹ کے باوجود ادویات کی قیمتوں میں 25 فیصد اضافے کے فارما صنعت کے مطالبے کو نہیں مانا گیا اور صرف 15 فیصد اضافے کی اجازت دی گئی تھی۔ایگزیکٹو ڈائریکٹر کا کہنا تھا کہ ادویات کی صنعت واحد نجی شعبہ ہے جسے حکومت کی جانب سے کنٹرول کیا جاتا ہے، اسکے علاوہ ادویات کی قیمتوں کے خلاف غیر ضروری اور بے بنیاد تنقید شروع کی گئی اور کچھ کیسز میں غلط اعداد و شمار کو استعمال کیا گیا۔اس موقع پر انہوں نے یہ بھی کہا کہ کسی فارما کمپنی نے سپریم کورٹ کے احکامات اور ایس آر او کی خلاف وزری کرکے قیمتوں میں اضافہ نہیں کیا۔

مزید :

صفحہ آخر -