کرونا مریضوں پرکارگرم عام ملیریا دوابھی مارکیٹ سے غائب، بلیک میں فروخت

      کرونا مریضوں پرکارگرم عام ملیریا دوابھی مارکیٹ سے غائب، بلیک میں فروخت

  

لاہور(جنرل رپورٹر) کرونا وائرس کے مریضوں پر ملیریا کی دوائی موثر ہونے کے بعد مارکیٹس سے نایاب ہو گئی، ملیریا کے مریض ہسپتالوں اور اوپن مارکٹیس میں ادویات کے حصول کیلئے دھکے کھانے پر مجبور ہیں۔پاکستان میں کرونا وائرس کی وباء سے متاثرہ مریضوں کیلئے ملیریا کی ادویات امید کی کرن بننے لگی تو ہسپتالوں اور مارکیٹس سے ملیریا کی ادویات ڈھونڈنا امتحان بن گیا۔ فیصل آباد کے سرکاری ہسپتالوں اور میڈیسن مارکیٹ میں ملیریا کی ادویات نایاب ہو چکی ہیں۔ادویات کے حصول کیلئے مریض پہلے سرکاری ہسپتالوں اور پھر مارکیٹوں سے مایوس لوٹنے لگے، مریضوں کے مطابق ملیریا کی ادویات بلیک میں مہنگے داموں بیچی جا رہی ہے۔اس حوالے سے پیشنٹ پروٹیکشن کونسل کے عہدیداروں رانا محمد ارشد،حاجی غلام حسین منہاس،حافظ محمد اکمل،صادق اور کونسل کے لیگل ایڈوائزر اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ ملیریا کی ادویات کرونا کے مریضوں کیلئے موثر ہونے کے سبب مارکیٹس میں دستیاب نہیں، حکومتی عدم توجہی کے باعث میڈیسن مارکیٹوں میں ملیریا سمیت دیگر بیماریوں کی ادویات کی فراہمی کا نظام متاثر ہے جس سے بلیک مافیا خوب کمائی کر رہا ہے۔اس سلسلے میں سمجھتے ہیں کہ وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد سمیت پوری پنجاب حکومت اور وفاقی محکمہ صحت کی ناکامی ہے۔ ایسی دوائی جو کرونا کے مریضوں کی زندگی کیلئے ضروری ہیں اس کا غائب ہونا باعث شرم ہے حکومت کو اس کا فوری نوٹس لینا چاہئے۔

ملیریا دوا

مزید :

صفحہ آخر -