سندھ حکومت نے وعدے پر عمل نہیں کیا، لوگ سڑکوں پر نکل آئیں گے: فردوس شمیم

سندھ حکومت نے وعدے پر عمل نہیں کیا، لوگ سڑکوں پر نکل آئیں گے: فردوس شمیم

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف فردوس شمیم نقوی نے کہا ہے کہ سندھ حکومت نے وعدے پر عمل نہیں کیا،مراد علی شاہ صاحب پیسے بنانا بند کریں، لوگ بھوکے مر رہے ہیں،لوگ سڑکوں پر نکل آئیں گے، لوگوں کے گھروں کے دروازوں پر بیماریاں دستک دے رہی ہیں، کب تک صوبے کو بند رکھیں گے؟۔لاک ڈاون کے تقاضے پورے نہیں کیے جا رہے،یہ سیمی لاک ڈان ہے گلی محلوں میں بچے کھیل رہے ہیں جو کورونا وائرس کے پھیلنے کا سبب بن سکتا ہے۔وعدے کے مطابق لوگوں کو راشن تقسیم نہیں کیا جا رہا،ڈپٹی کمشنرز کے دفاتر کے سامنے لوگ راشن کے لئے دربدر ہیں،کہیں لوگوں کا لاوا پٹ نہ جائے اور بھوک کے مارے گھروں سے باہر نکل آئے تو پھر کچھ نہیں بچے گا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی پریس کلب میں ایک ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ پریس کانفرنس میں ان کے ہمراہ پارلیمانی لیڈر سندھ حلیم عادل شیخ، صدر پی ٹی آئی کراچی خرم شیر زمان، ترجمان پی ٹی آئی کراچی جمال صدیقی بھی موجود تھے۔قائد حزب اختلاف سندھ ورہنما پی ٹی آئی فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ سندھ حکومت سے درخواست ہے کہ لاک ڈاون میں نرمی کی جائے،لوگوں میں بے روز گاری اور غذائی قلت کا سامنا ہے۔ 14 اپریل کے بعد کا لائحہ عمل ابھی طے کیا جائے، انہوں نے کہا کہ بازاروں کے اوقات بڑھائیں جائیں، ایک دن کپڑوں کی دکانیں کھولی جاِیں، اور ایک دن باقی بازاروں کی دیگر دکانوں کا دن مقرر کیا جائے۔ سندھ حکومت نے اپنا ایک بھی فرض ادا نہیں کیا، غریب آج تک راشن کو رو رہا ہے، انہوں نے کہا کہ کے الیکٹرک عوام دشمن کمپنی بن گئی ہے، آپ ایوریج بلنگ کی بات کرتے ہیں، اور اس کے نام پر ہزاروں روپوں کے بل بھیج کر زیادتی کی جا رہی ہے۔ مگر حکومت اس حوالے سے کوئی اقدامات نہیں کر رہی۔انہوں نے کہا کہ لاک ڈان کے فیصلے پر سندھ حکومت کے ساتھ تھے صوبے میں کوئی بھوکا نہیں سوئے گا اس وعدے پر سندھ حکومت کا لاک ڈان پر ساتھ دیا تھا مگر اب فیکٹریوں سے ملازمین کو نکالا جارہا ہے، حکومت بے روزگاری کے خاتمے کے لیے فیکٹریوں کو کرونا کے ضابطہ اخلاق کے تحت کام کرنے کی اجازت دے۔فارما، فوڈ سمیت دیگر فیکٹریاں بند نہیں ہوئی، ان فیکٹریوں میں ایک بھی کرونا کا مریض سامنے نہیں آیا۔پیپلز پارٹی کاہمیشہ سازشی مزاج رہا ہے،سعید غنی کہتے ہیں کہ ہم احساس پروگرام کا حصہ بننا چاہتے ہیں، پیپلز پارٹی اس صوبے کی عوام کے ساتھ رحم کرے،پیپلز پارٹی نے ہر چیز کو تباہ برباد کردیا ہے،خرم شیر زمان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مراد علی شاہ وزیر اعلی نہیں بلکہ نالائق اعلی ہیں انہوں نے کہاتھا بیس لاکھ لوگوں کو راشن پہنچائیں گے۔یہ وہی وزیر اعلی ہے جس کے دورمیں کتے کے کاٹی کی دوائی نہیں ملتی۔یہ سب لاڑکانہ بھاگ جائیں گے کراچی والے کہاں جائیں گے۔یہ صرف پیسہ بنا رہے ہیں، سندھ حکومت بتائے کہ سیسی اور ویلفیر بورڈ کا پیسہ کہاں گیا؟۔اسپتالوں میں کٹس نہیں ہیں، ڈاکٹرز کے پاس حفاظتی کٹس نہیں ہیں، ڈاکٹرز میں کرونا کی تصدیق ہوگِی ہے، سندھ حکومت مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے، لوگ اب آپکے گھروں تک آکر آپکو پکڑے گے، سندھ حکومت کے وزرا کہاں ہیں؟ ہمیں نہیں دکھ رہے ہیں،مراد علی شاہ ایک مربوط لاِحہ عمل تشکیل دیں اس میں پی ٹی آئی انکی مدد کرنے کو تیار ہے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -