سینیٹ میں خفیہ کیمروں کی تنصیب، تحقیقات کیلئے 7رکنی کمیٹی قائم، گیلانی نے چیئر مین سینیٹ کے خلاف انٹر ا کورٹ اپیل دائر کر دی 

سینیٹ میں خفیہ کیمروں کی تنصیب، تحقیقات کیلئے 7رکنی کمیٹی قائم، گیلانی نے ...

  

اسلام آباد (آن لائن)چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے 12 مارچ کو چیئرمین و ڈپٹی چیئرمین کے انتخاب اور نئے سینیٹر کے حلف کے موقع پر ایوان بالا کے ہال میں خفیہ کیمروں کی تنصیب کے معاملے کی تحقیقات کے لئے 7 رکنی کمیٹی تشکیل دے دی ہے جس میں حکومت اور اپوزیشن کے نمائندوں کو شامل کیا گیا ہے یہ کمیٹی ایک ماہ کے اندر اپنی رپورٹ پیش کرے گی  اور ذمہ داروں کا تعین بھی کرے گی،کمیٹی کو اختیار دیا گیا ہے کہ وہ 7 اراکین میں سے اپنا چیئرمین خود منتخب کرے۔کمیٹی کے اراکین میں پیپلز پارٹی کے سکندر مینڈریو،تحریک انصاف کے اعظم خان سواتی،مسلم لیگ (ن) کے رانا مقبول احمد،بلوچستان عوامی پارٹی کے سرفراز احمد بگٹی، جے یو آئی ف کے سینیٹر طلحہ محمود اور آزاد سینیٹر ہدایت اللہ شامل ہیں۔،ایگزیکٹیو ڈائریکٹر PIPSمحمد انور کو بھی کمیٹی کا حصہ بنایا گیا ہیواضح رہے کہ 12 مارچ کو اراکین سینیٹ کے حلف اور چیئرمین و ڈپٹی چیئرمین کے انتخاب کے دن ہال میں خفیہ کیمرے لگائے گئے تھے جس پر اپوزیشن نے شدید احتجاج کیا تھا،حکومت اور اپوزیشن نے اس کی ذمہ داری ایک دوسرے پر ڈالی تھی۔

کمیٹی قائم

 اسلام آباد(آئی این پی)  پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماو  سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے صادق سنجرانی کا چیئرمین سینیٹ کا الیکشن پھر چیلنج کر دیا، رہنما پیپلزپارٹی نے سنگل بنچ کے فیصلے کے خلاف اسلام آباد ہائیکورٹ میں انٹرا کورٹ اپیل دائر کی۔ اپوزیشن لیڈر سینیٹ یوسف گیلانی نے چیئرمین سینیٹ کے الیکشن کیخلاف سنگل بینچ کے فیصلے کے خلاف اسلام آباد ہائیکورٹ میں انٹرا کورٹ اپیل دائر کی۔ یوسف رضا گیلانی نے سنگل بینچ کا فیصلہ کالعدم قرار دینے کی استدعا کی۔ یوسف رضا گیلانی نے اپیل میں موقف اپنایا کہ صادق سنجرانی کو عہدے سے ہٹا کر مجھے کامیاب چئیرمین سینیٹ قرار دیا جائے، سات ووٹ مسترد کرنے کے پریزائیڈنگ افسر کے فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے۔ یاد رہے اسلام آباد ہائیکورٹ کے سنگل بینچ نے یوسف رضا گیلانی کی درخواست مسترد کر دی تھی۔ فاروق ایچ نائیک کے ذریعے دائر درخواست میں وفاقی حکومت، پرایزائیڈنگ افسر مظفر حسین شاہ، چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی سمیت دیگر کو فریق  بنایا گیا ہے

 انٹرا کورٹ اپیل

مزید :

صفحہ اول -