علماء مشائخ کی جانب سے وقف بل مسترد،گھناؤنی سازش قرار

علماء مشائخ کی جانب سے وقف بل مسترد،گھناؤنی سازش قرار

  

نوشہرہ (بیورورپورٹ) خیبر پختونخواہ بھر کے علما ء مشائخ نے حکومت کی جانب منظور کر دہ وقف بل مسترد کر دیا اور اس بل کو یہود و دیگر استعماری قوتوں کا ایجنڈا قرار دیتے ہوئے اسلام ، پاکستان، مدارس، خانقاہوں کے خلاف حکومت کا گھناونا سازش قرار دیا حکومت کو بل پر نظر ثانی کیلئے ایک ماہ کی مہلت نظر ثانی نہیں ہوئی تو ملک بھر کے علما، مشائخ ڈی چوک میں غیر معینہ مدت کیلئے دھرنا دیں گے آستانہ عالیہ قادری مانکی شریف میں منعقدہ تحفظ اسلام کانفرنس میں علما ء کا متفقہ اعلان اس سلسلے میں آستانیہ عالیہ قادریہ مانکی شریف میں تحفظ اسلام کانفرنس کا انعقاد ہوا کانفرنس کی صدارت شیخ الحدیث و شیخ القران علامہ مولانا فضل سبحان نے کی تقریب سے صاحبزادہ محمد امین پیر آف مانکی شریف نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ حکمرانوں نے آئی ایم ایف اور ایف اے ٹی ایف سمیت دیگر استعماری قوتوں کی ایما پر وقف بل کی آڑ میں اسلام، پاکستان،  دینی مدارس اور علما ء و مشائخ کے خلاف گھناونا سازش شروع کر کے قرار داد پاکستان اور حصول پاکستان کے ساتھ غداری کے مرتکب ہوئے ہیں انہوں نے کہا کہ مدارس، خانقاہیں، مساجد اور دربار اولیا  سمیت صوفی ازم ملک میں امن، محبت بھائی چارے کا درس دیتی ہے اور اسی مساجد، مدارس، خانقاہیوں اور صوفی ازم نے ملک میں دین اسلام کی ترویج، تبلیغ کرکے اس ملک کے نظریاتی سرحدوں کے ساتھ ساتھ جغرافیائی سرحدوں کی تحفظ کیلئے قربانیاں دی ہیں جس کا تریخ گواہ ہے اس موقع پر قران بورڈ چیئر مین علامہ حامد رضا، فضل سبحان، مفتی محمد فہیم، مولانا معراج الدین سرکانی، صاحبزادہ محمد منیب پیر سباق شریف،قاری فیض بخش رضوی، مولانا محمد عزیز مفتی اسماعیل،مولانا محمد یونس بگٹ گنج اور پیر زادہ نبی امین پیر آف مانکی شریف نے بھی خطاب کیا صاحبزادہ محمد امین نے اپنے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکمرانوں نے قادیانیوں اور یہودوں کی ایما پر وقف بل منظور کرتے ہوئے یہود نواز اور قادیانیت نواز ہونے کا ثبوت دے دیا انہوں نے کہا کہ ہم مدارس، مساجد، خانقاہوں کے احتساب کے مخالف نہیں لیکن کیا حکومت نے جو منصوبہ تیار کیا ہے وہ انتہائی خطرناک ہے اور ان کا یہ منصوبہ دین اسلام کے خلاف ہے انہوں نے کہا کہ حکمران ہوش کے ناخن لیں کیونکہ جس کسی نے بھی مدارس، مساجد، خانقاہوں کے ساتھ چھیڑا ہے اگر آج تخت پر ہیں تو کل تختے پر اور جو وزیر ہے تو کل اسیر ہوں گے انہوں نے حکومت کو وقف بل واپس لینے کیلئے ایک ماہ کا الٹی میٹم دے دیا بصورت دیگر ڈی چوک میں حکومت کے خلاف دما دم مست قلندر کریں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -