کاشتکاردھان کی فصل کو نقصان پہنچانے والے کیڑوں سے بچاﺅ کےلئے بروقت اقدامات کریں

کاشتکاردھان کی فصل کو نقصان پہنچانے والے کیڑوں سے بچاﺅ کےلئے بروقت اقدامات ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہور(کامرس رپورٹر)محکمہ زراعت پنجاب کی طرف سے کاشتکاروں کو آگاہ کیا جاتا ہے کہ دھان کی فصل کو نقصان پہنچانے والے کیڑوں سے بچاﺅ کے لئے بروقت اقدامات کریں۔ زیادہ حملہ کی صورت میں فصل بالکل تباہ ہو جاتی ہے اور کٹائی کے قابل بھی نہیں رہتی۔ ترجمان کے مطابق حملہ آور کیڑوں میں سب سے زیادہ نقصان دہ کیڑے تنے کی سنڈی، پتہ لپیٹ سنڈی، ٹوکا اور سفید پشت والا تیلہ ہیں۔ تنے کی سنڈی زیادہ تر باسمتی اقسام پر حملہ آور ہوتی ہے۔
پتہ لپیٹ سنڈی اری اور باسمتی دونوں اقسام پر یکساں حملہ آور ہوتی ہے جبکہ سفید پشت والا تیلہ عموماً اری اقسام پر زیادہ حملہ آور ہوتا ہے جبکہ ٹوکا (گراس ہاپر) دھان کی پنیری اور فصل دونوں کو نقصان پہنچاتا ہے۔ زرعی ماہرین کے مطابق ان کیڑوں کے انسداد کے لئے کھیتوں کے اندر اور اطراف میں اُگی ہوئی جڑی بوٹیاں تلف کریں اور ان کیڑوں کو دستی جالوں سے پکڑ کر تلف کردیں۔
 انہوں نے بتایا کہ گذشتہ سال چین سے پولٹری کی کل برآمد کی نصف جاپان کیلئے گیا۔ سال 2013ءمیں چین نے 43600 ٹن چکن برآمد کیا جو 2012ءسے 2 فیصد زیادہ تھا۔ انہوں نے بتایا کہ پولٹری چکن ایکسپورٹ میں مرغیوں کے پکا پکائے کھانے اور مصنوعات شامل ہیں جن کی برآمدی حجم 266900 ٹن رہا۔ فروزن چکن کل برآمد کا 23فیصد سے 99900 ٹن رہا ہے۔

مزید :

کامرس -