دنیا کے امیر ترین لوگوں کی اصل دولت بتائے گئے اعدادوشمار سے کہیں زیادہ ،تازہ تحقیق

دنیا کے امیر ترین لوگوں کی اصل دولت بتائے گئے اعدادوشمار سے کہیں زیادہ ،تازہ ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


نیویارک (نیوز ڈیسک) دنیا کے نامور ماہرین معاشیات نے ایک تازہ تحقیق نے انکشاف کیا ہے کہ دنیا کے امیر ترین لوگوں کی اصل دولت بتائے گئے اعدادوشمار سے کہیں زیادہ ہے اور اس کا بڑا حصہ ٹیکس چوری اور مالی بے قاعدگیوں پر مبنی ہے۔ یورپین سنٹرل بینک، لندن سکول آف اکنامکس کے گیبریل زک مکین اور فلپ ورمیولین کی تین علیحدہ علیحدہ تحقیقات سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ دنیا کے ایک فیصد امیر ترین لوگوں کی دولت کے بارے میں بتائے جانے والے تمام اعدادوشمار میں ان کی صل دولت نہیں بتائی گئی۔ ان لوگوں کی دولت کا بڑا حصہ مختلف ممالک میں پھیلا ہوا ہے جس کی وجہ سے یہ خفیہ ہے اور ٹیکس سے بھی محفوظ ہے۔ زک مین کا کہنا ہے کہ صرف امریکہ میں 0.1 فیصد (کل آبادی کا ایک ہزارواں حصہ) امری ترین لوگوں کے پاس ملک کی دولت کا 23.5 فیصد ہے، انہوں نے بتایا کہ دنیا کے ایک فیصد امیر ترین لوگوں کی دولت باقی ساری دنیا کی دولت سے کہیں زیادہ ہے اور اس کی وجہ سے دنیا ہی امیر اور غریب کے درمیان فرق خوفناک حد تک بڑھ گیا ہے۔ انہوں نے اس فرق کو اقتصادی پالیسیوں کی راہ میں بھی رکاوٹ قرار دیا۔ امریکہ کے امیر ترین لوگوں میں شمار ہونے والے 59 سالہ جیفری ہولینڈر نے ان تحقیقات سے اتفاق کرتے ہوئے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ آپ کے پاس جتنی زیادہ دولت ہو اسے چھپانا اور ٹیکسوں سے بچنا اتنا ہی آسان ہوجاتا ہے۔

مزید :

صفحہ آخر -